نٹھاری سانحہ: ریپ، قتل کی کوشش میں سریندر کولی- مونندرپنڈھیر مجرم قرار

Jul 22, 2017 02:09 PM IST | Updated on: Jul 22, 2017 02:11 PM IST

غازی آباد۔ انسانیت کو شرمسار کر دینے والے نٹھاری سانحہ کے ملزم سریندر کولی اور مونندر پنڈھیر کو ہفتہ کو غازی آباد کورٹ نے مجرم قرار دیا ہے۔ کورٹ نے انہیں ریپ اور قتل کی کوشش کا ملزم پایا ہے۔ پیر کو ان کی سزا کا اعلان ہو گا۔ بتا دیں کہ نٹھاری سانحہ سے جڑے 6 معاملہ میں سی بی آئی کورٹ نے سریندر کولی کو مجرم قرار دیتے ہوئے پھانسی کی سزا سنائی ہے۔ تاہم، سال 2015 میں الٰہ آباد ہائی کورٹ نے ایک معاملے میں اس کی پھانسی کی سزا کو عمر قید میں تبدیل کر دیا تھا۔

یہ ہے پورا معاملہ

نٹھاری سانحہ: ریپ، قتل کی کوشش میں سریندر کولی- مونندرپنڈھیر مجرم قرار

نٹھاری کیس کے بعد مظاہرہ کرتے بچے (گیٹی امیجیز)۔

بتا دیں کہ 31 اکتوبر 2006 کو ایک لڑکی اچانک غائب ہو گئی تھی۔ اس کے بعد پورے نٹھاری معاملے کا انکشاف ہوا تھا، جس میں جیوتی، پشپا وشواس، نندا دیوی، پائل، رچنا، ہرش، کو. نشا، رمپا هلدھر، ستیندر، ديپالی، آرتی، پائل، پنکی سرکار، انجلی، سونی، شیخ رضا خان اور بینا کا قتل کیا گیا تھا۔ ابتدائی جانچ میں پتہ چلا تھا کہ 20 جون، 2005 کو 8 سال کی ایک بچی جیوتی کے نٹھاری علاقے سے غائب ہونے کے بعد سے بچیوں-لڑکیوں کے غائب ہونے کا سلسلہ شروع ہو گیا تھا۔ معاملے کی سنجیدگی کو دیکھتے ہوئے پولیس کی مختلف ٹیموں نے قومی دارالحکومت خطہ سمیت ملک کے کئی علاقوں میں سرچ آپریشن چلایا۔ لیکن کوئی سراغ نہیں ملا۔

سات مئی 2006 کو 21 سال کی لڑکی پائل جب غائب ہوئی تو پولیس کو اہم سراغ اس کے موبائل سے ملا۔ پولیس نے اس نمبر کی کال ڈٹیل نکلوائی۔ اس کے بعد جب اس میں سے ایک نمبر پر کال کیا گیا تو اس کا نام مونندر سنگھ پنڈھیر کا تھا۔ اس کے بعد جب سختی سے پوچھ گچھ ہوئی تو پتہ چلا کہ کئی لڑکیوں اور بچیوں کے ساتھ ریپ کے بعد انہیں مار کر پنڈھیر کے گھر میں دفن کر دیا گیا تھا۔

 

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز