بابائے قوم گاندھی جی کے قتل سے متعلق گوڈسے کا بیان فوری طور پر عام کریں : انفارمیشن کمیشن

Feb 17, 2017 09:23 PM IST | Updated on: Feb 17, 2017 09:23 PM IST

نئی دہلی : مرکزی انفارمیشن کمیشن نے مہاتما گاندھی کے قتل سے وابستہ ناتھورام گوڈسے کے بیان کو عام کرنے کا حکم دیا ہے۔ کمیشن نے کہا ہے کہ گوڈسے کے بیان سمیت دیگر متعلقہ ریکارڈ کو فوری طور پر نیشنل آرکائیو کی ویب سائٹ پر عام کیا جائے۔

انفارمیشن کمشنر سری دھر اچاريل نے کہا کہ کوئی ناتھورام گوڈسے اور ان ساتھی ملزم سے اتفاق بھلے ہی نہ رکھے، لیکن ہم ان کے خیالات کو عام کرنے سے انکار نہیں کر سکتے۔ انہوں نے اپنے حکم میں کہا کہ نہ ہی ناتھورام گوڈسے اور نہ ہی ان کے اصولوں اور خیالات کو ماننے والا شخص کسی کے اصول سے اختلاف ہونے کی صورت میں اس کا قتل کرنے کی حد تک جا سکتا ہے۔ غور طلب ہے کہ گوڈسے نے 30 جنوری 1948 کو مہاتما گاندھی کا قتل کر دیا تھا۔

بابائے قوم گاندھی جی کے قتل سے متعلق گوڈسے کا بیان فوری طور پر عام کریں : انفارمیشن کمیشن

عرضی دائر کرنے والے آشوتوش بادل نے دہلی پولیس سے اس قتل کی چارج شیٹ اور گوڈسے کے بیان سمیت دیگر معلومات طلب کی تھی ۔ دہلی پولیس نے ان کی درخواست کو نیشنل آرکائیوکے پاس بھیجتے ہوئے کہا ہے کہ ریکارڈ کو سونپ دیا گیا ہے۔

نیشنل آرکائیو نے کہا کہ وہ ریکارڈ دیکھ کر خود اطلاعات حاصل کر لیں۔ معلومات حاصل کرنے میں ناکام رہنے کے بعد عرضی گزار مرکزی انفارمیشن کمیشن پہنچا ۔ انفارمیشن کمشنرنے نیشنل آرکائیو کے انفارمیشن کمشنر کو ہدایت دی ہے کہ وہ فوٹواسٹیٹ کے لئے تین روپے فی صفحہ فیس نہ لیں۔

تاہم دہلی پولیس اور نیشنل آرکائیو نے اطلاع عام کرنے میں کوئی اعتراض نہیں ظاہر کیا ہے۔ اچاريل نے کہا کہ مانگی گئی معلومات کے لئے کسی رعایت کی ضرورت نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ چونکہ معلومات 20 سال سے زیادہ پرانی ہے، ایسی صورت میں اگر وہ آر ٹی آئی قانون کے 8: 1: اے کے تحت نہیں آتا ، تو اسے خفیہ نہیں رکھا جا سکتا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز