راہل گاندھی کا وسندھرا راجے پر طنز ،کہا : ہم 21 صدی میں ہیں، یہ 2017 ہے ، 1817 نہیں

Oct 22, 2017 05:13 PM IST | Updated on: Oct 22, 2017 05:13 PM IST

نئی دہلی : کانگریس کے نائب صدر راہل گاندھی نے متنازع آرڈیننس کو لے کر راجستھان کی وسندھرا حکومت پر تیکھا نشانہ سادھا ہے۔ راہل نے کہا کہ ہم 2017 میں جی رہے ہیں نہ کی 1817 میں ۔ انہوں نے ایک خبر بھی ٹیگ کی جس کا عنوان ہے کہ قانونی ماہرین کی رائے میں راجستھان کا آرڈیننس شخصی آزادی کے خلاف ہے۔

خیال رہے کہ پیر سے شروع ہونے والی اسمبلی اجلاس میں راجستھان حکومت ایک ایسا بل لانے جارہی ہے ، جو ایک طرح سے سبھی ممبران پارلیمنٹ ، ممبران اسمبلی ، ججوں اور افسروں کو لگ بھگ امیونیٹی دے گا۔ ان کے خلاف پولیس یا عدالت میں شکایت کرنی آسان نہیں ہوگی۔ سی آر پی سی میں ترمیم کے اس بل کے بعد سرکار کی منظوری کے بغیر ان کے خلاف کوئی کیس درج نہیں کرایا جاسکے گا۔ یہی نہیں جب تک ایف آئی آر نہیں ہوتی ، پریس میں اس کی رپورٹنگ بھی نہیں کی جاسکے گی۔ ایسے کسی معاملہ میں کسی کا نام لینے پر دو سال کی سزا بھی ہوسکتی ہے۔

راہل گاندھی کا وسندھرا راجے پر طنز ،کہا : ہم 21 صدی میں ہیں، یہ 2017 ہے ، 1817 نہیں

کانگریس نائب صدر راہل گاندھی: فائل فوٹو۔

بل کے مطابق کسی جج یا پبلک سروینٹس کی کسی کارروائی کے خلاف جو اس نے اپنی ڈیوٹی کے دوران کی ہو ، آپ عدالت کے ذریعہ بھی ایف آئی آر درج نہیں کراسکتے ہیں۔ ایسے معاملوں میں ایف آئی آر درج کرانے کیلئے سرکار کی منظوری لینی ضروری ہوگی۔

اسی آرڈیننس کے بارے میں راہل گاندھی نے ٹویٹ کرکے کہا کہ پوری عاجزی سے میں کہنا چاہتا ہوں کہ ہم 21 ویں صدی میں ہیں ۔ یہ 2017 ہے ، 1817 نہیں ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز