جی ایس ٹی کے بعد اب بچے ہوئے مال پر نیا ایم آر پی نہیں ڈالنے پر کمپنیوں کے حکام کو جانا پڑسکتا ہے جیل

Jul 07, 2017 07:11 PM IST | Updated on: Jul 07, 2017 07:11 PM IST

نئی دہلی : باقی ماندہ مال پر نیا ایم آر پی نہیں ڈالنے والی کمپنیوں کی اب خیر نہیں ہے۔ ایسی کمپنیوں کے حکام کو جیل کی ہوا بھی کھانی پڑ سکتی ہے۔ صارفین امور کے وزیر رام ولاس پاسوان نے خبردار کرتے ہوئے کہا ہے کہ صارفین کے مفاد میں اگر پہلے کے بچے اشیا پر جی ایس ٹی کے نفاذ کے بعد کی قیمتیں شائع نہیں کی جاتی ہیں ، تو جیل کی سزا سمیت ایک لاکھ روپے تک کا جرمانہ عائد کیا سکتا ہے۔

مسٹر پاسوان نے کہا کہ جی ایس ٹی کے نافذ ہونے سے کچھ صارفین کی مصنوعات سستی ہوئی ہیں تو کچھ کی قیمتیں بڑھ گئی ہیں۔ مینوفکچرنگ کرنے والوں کو مشورہ دیا گیا ہے کہ نئی شرح کی معلومات کے لئے و ہ مصنوعات پر قیمتیں لکھیں ۔ اگر کوئی اس کی خلاف ورزی کرتا ہے تو اس کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔

جی ایس ٹی کے بعد اب بچے ہوئے مال پر نیا ایم آر پی نہیں ڈالنے پر کمپنیوں کے حکام کو جانا پڑسکتا ہے جیل

علاوہ ازیں پاسوان نے عوامی نظامِ تقسیم (پی ڈی ایس) کی دکانوں کے الاٹمنٹ میں درج فہرست ذات وقبائل کے لوگوں کو ریزرویشن دینے پر زور دیتے ہوئے کہا کہ ریاستی حکومتوں کو اس کے لئے فوری طور پر اقدامات کرنا چاہئے۔ مسٹر پاسوان نے یہاں پریس کانفرنس میں کہا کہ ریاستی حکومتیں ان طبقات کو ملازمتوں میں جتنا فیصد ریزرویشن دیتی ہیں اتنی ہی عوامی نظام تقسیم کی دکانوں کے الاٹمنٹ میں دینا چاہیے۔

ریاستی حکومتیں ان کی دکانوں کے الاٹمنٹ کے لئے لائسنس جاری کرتی ہیں اس لئے انہیں ہی ریزرویشن لاگو کرنا ہوگا۔ اس سے درج فہرست ذات وقبائل کے غریبوں کو روزگار مل سکے گا اور وہ اقتصادی طور پر مضبوط ہو سكیں گے۔ انہوں نے کہا کہ اس سلسلے میں ریاستوں کے وزرائے اعلی کو مکتوب بھی بھیجا گیا ہے۔

نیشنل فوڈ سیکورٹی ایکٹ کا حوالہ دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ گزشتہ تین سال سے سبسڈی پر غریبوں کو دستیاب کرائے جا رہے غذائی اجناس کی شرح میں کوئی اضافہ نہیں کیا گیا ہے اور حکومت نے جون 2018 تک پرانی شرح پر ہی انہیں فراہم کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ اس فیصلے سے 80 کروڑ 55 لاکھ لوگوں کو فائدہ ہو گا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز