بابا رام رحیم کیس : تشدد پر عمر عبد اللہ کا سوال ، کیا مرچی گرینیڈ اور پیلٹ گن صرف کشمیریوں کے لئے ہیں

Aug 25, 2017 05:47 PM IST | Updated on: Aug 25, 2017 05:47 PM IST

سری نگر: جموں وکشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ نے سی بی آئی کی خصوصی عدالت کی جانب سے ڈیرہ سچا سودا کے سربراہ بابا گرمیت رام رحیم کو عصمت دری کے معاملے میں مجرم قرار دیے جانے کے بعد پنچکولہ اور چندی گڑھ میں پیش آنے والے تشدد کے واقعات پر تبصرہ کرتے ہوئے سوال کیا ہے کہ ’کیا مرچی گرینیڈاور پیلٹ گن صرف کشمیریوں کے لئے ہیں؟‘۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعلیٰ ہریانہ کو ڈیوٹی میں غفلت بھرتنے پر عہدے سے برطرف کیا جانا چاہیے۔

مسٹر عبداللہ جو کہ ریاست کی سب سے بڑی اپوزیشن جماعت نیشنل کانفرنس کے کارگذار صدر بھی ہیں، نے جمعہ کو صحافی راہل کنول کے ایک ٹویٹ ’ہریانہ کے متعدد مقامات سے پتھراؤ اور پرتشدد جھڑپوں کی اطلاعات موصول ہورہی ہیں۔ وہی ہورہا ہے جس کا خدشہ تھا‘ کے ردعمل میں لکھا ’مرچی بم؟ مرچی گرینیڈ؟ پیلٹ گن؟ کیا (سیکورٹی) فورسز نے یہ ہتھیار صرف احتجاجی کشمیریوں کے خلاف استعمال کرنے کے لئے رکھے ہیں؟‘۔ انہوں نے کہا ’پنچکولہ میں انسانی ڈھالوں کا حربہ استعمال نہیں کیا گیا۔ حال ہی مختلف ٹیلی ویژن نیوز اسٹوڈیوز میں اس حربے کی بطور بھیڑ کنٹرول تکنیک بہت تعریف کی جارہی تھی‘۔

بابا رام رحیم کیس : تشدد پر عمر عبد اللہ کا سوال ، کیا مرچی گرینیڈ اور پیلٹ گن صرف کشمیریوں کے لئے ہیں

مسٹر عبداللہ نے کہا کہ وزیر اعلیٰ ہریانہ کو ڈیوٹی میں غفلت بھرتنے پر عہدے سے برطرف کیا جانا چاہیے۔ انہوں نے ایک ٹویٹ میں کہا ’وزیر اعظم مودی کو ڈیوٹی میں غفلت بھرتنے پر اپنے وزیر اعلیٰ ہریانہ کو عہدے سے برطرف کرنا چاہیے۔ وزیر اعلیٰ کے پاس اس دن کی تیاری کے لئے کافی وقت تھا‘۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز