کشمیر میں جیپ پر نوجوان کو گھمانے کے معاملہ میں ایف آئی آر درج، مودی حکومت دے گی فوج کا ساتھ

Apr 17, 2017 01:30 PM IST | Updated on: Apr 17, 2017 01:31 PM IST

سری نگر : ایک نوجوان کو جیپ کے آگے باندھ کر گھمانے کی صورت میں کشمیر پولیس نے ہندوستانی فوج کی ایک یونٹ کے خلاف ایف آئی آر درج کر کے جانچ شروع کر دی ہے۔ تاہم میڈیا میں آئی خبروں کے مطابق مودی حکومت نے ہر حالت میں فوج کا ساتھ دینے کا فیصلہ کیا ہے۔

خبروں کے مطابق حکومت کا خیال ہے کہ فوج کے افسر نے مشکل حالات میں سیکورٹی کے پیش نظر یہ فیصلہ لیا تھا۔ وزیر دفاع ارون جیٹلی اس معاملہ پر فوج کمانڈروں سے بات کر سکتے ہیں۔ حکومت نے فوج کے اقدامات کی تعریف کی ہے۔

کشمیر میں جیپ پر نوجوان کو گھمانے کے معاملہ میں ایف آئی آر درج، مودی حکومت دے گی فوج کا ساتھ

خیال رہے کہ جس کشمیری نوجوان کو جیپ پر باندھ کر گھمایا گیا تھا ، اس کی شناخت فاروق ڈار کے طور پر ہوئی ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ وہ پتھر بازی میں ملوث نہیں تھا، بلکہ ووٹ ڈال کر گھر واپس لوٹ رہا تھا۔

قابل ذکر ہے کہ جموں وکشمیر کے سابق وزیر اعلی عمر عبداللہ نے ٹویٹ کے ذریعے ایک ویڈیو شیئر کیا تھا ، جس میں ہندوستانی فوج کے جوان ایک کشمیری نوجوان کو جیپ کے آگے باندھ کر گھما رہے تھے۔ فوج اس نوجوان کا استعمال پتھربازوں سے بچنے کے لئے ہیومن شیلڈ کی طرح کر رہی تھی۔ نوجوان کے مطابق یہ مکمل واقعہ 9 اپریل کو پیش آیا تھا۔

کشمیر میں پتھربازوں کو سبق سکھانے کے نام پر یہ ویڈیو کافی وائرل ہوئی تھی۔ اس میں شامل آرمی یونٹ کی شناخت 53 راشٹریہ رائفلس کے طور پر ہوئی ہے۔ ریاست کی وزیر اعلی محبوبہ مفتی کی ہدایت پر معاملہ کی تحقیقات کر رہے حکام نے بتایا تھا کہ فاروق ڈار وسطی کشمیر کے بڈگام ضلع کے كھاگ تحصیل کے سيتاهر گاؤں کا رہنے والا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز