رمضان کی برکت : سحری کی وجہ سے کشمیر میں ٹل گیا دہشت گردانہ حملہ

Jun 06, 2017 11:43 PM IST | Updated on: Jun 06, 2017 11:43 PM IST

سری نگر : جموں و کشمیر میں سی آر پی ایف کیمپ پر حملہ کرنے آئے چار دہشت گردوں کو مار گرانے میں سحری کا بڑا رول سامنے آیا ۔ اطلاعات کے مطابق کمانڈنٹ اقبال احمد روزے کے لئے سحری کے لیے علی الصبح اٹھے تھے اور اسی وقت ان کے وائرلیس سے بری خبر کی آواز آنے لگیں ۔ یہ پیر کی صبح تھی ۔

انہیں بتایا گیا کہ باندی پورہ میں سی آر پی ایف کے کیمپ پر خود کش حملہ ہوا ہے ۔ کمانڈنٹ نے سحری کو چھو ڑکر رائفل اٹھالی اور وہ فورا کیمپ کی جانب دوڑے ۔ کیمپ پر لشکر طیبہ کے چار دہشت گردوں نے حملہ کیا تھا ۔ ایک افسر نے بتایا کہ فوری طور پر کارروائی اور اضافی سیکورٹی اہلکار کی وجہ سے دہشت گردانہ حملہ ناکام ہو گیا ، نہیں تو کافی لوگوں کی جانیں جا سکتی تھیں ۔

رمضان کی برکت : سحری کی وجہ سے کشمیر میں ٹل گیا دہشت گردانہ حملہ

(Photo:PTI)

چیتن چیتا کے زخمی ہونے کے بعد احمد نے 45 ویں سی آر پی ایف بٹالین کی کمان سنبھالی تھی ۔ حملے کے وقت وہ کیمپ سے 200-300 میٹر دور سبنل میں تھے ۔ کیمپ میں سی آر پی ایف کے دو کمپنیوں کے جوان تھے ۔ وائر لیس پر اطلاع ملتے ہی احمد فوری طور پر دوڑے اور دہشت گردوں کے خلاف کارروائی مکمل ہونے تک وہ موقع پر ہی رہے ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز