کشمیر میں کار بم سے بڑے فدائین حملے کی تیاری میں ہے دہشت گرد تنظیم جیش محمد اور لشکر طیبہ

دہشت گرد تنظیم جیش محمد اور لشکر طیبہ کسمیرمیں بڑے حملے کی تیاری میں ہے۔یہ دونوں تنظیمیں کشیر میں وسفوٹک بھرے گاڑی سے حملہ کر سکتی ہیں۔وادی میں سکیورٹی ایجنسی کو ان دونوں دہشت گرد تنظیموں کے موبائل کالز انٹرسیپٹ کرنے کے بعد یہ جانکاری حاصل ہوئی ہے۔15جنوری کو نیوز 18نے آپ کو جانکاری دی تھی کہ کشمیر میں سکیورٹی ایجنسیون نے فدائین حملوں کو لیکر کئی الرٹ جاری کئے ہیں۔اس کے بعد سے یہاں اب تک تین بڑے فدائین حملے ہوئے ہیں۔اس میں دو حملے کشمیر میں ہوئے ہیں جبکہ ایک حملہ جموں میں ہوا ہے۔ان حملوں میں اب تک 6سکیورٹی اہلکار شہید ہوئے ہیں جبکہ 10دہشت گرد بھی ہلاک ہوئے ہیں۔سکیورٹی ایجنسیوں سے ملی جانکاری کے مطابق جیش محمداور لشکر طیبہ کے دہشت گرد دھماکہ خیز مواد سے بھرے ٹرک اور کار سے حملہ کرنے کی تیاری میں ہیں۔

Feb 12, 2018 06:56 PM IST | Updated on: Feb 12, 2018 07:08 PM IST

جموں۔کشمیر۔دہشت گرد تنظیم جیش محمد اور لشکر طیبہ کشمیرمیں بڑے حملے کی تیاری میں ہے۔یہ دونوں تنظیمیں کشمیر میں دھماکہ خیز مواد سے بھری گاڑی سے حملہ کر سکتی ہیں۔وادی میں سکیورٹی ایجنسی کو ان دونوں دہشت گرد تنظیموں کے موبائل کالز انٹرسیپٹ کرنے کے بعد یہ جانکاری حاصل ہوئی ہے۔15جنوری کو نیوز 18نے آپ کو جانکاری دی تھی کہ کشمیر میں سکیورٹی ایجنسیون نے فدائین حملوں کو لیکر کئی الرٹ جاری کئے ہیں۔اس کے بعد سے یہاں اب تک تین بڑے فدائین حملے ہوئے ہیں۔اس میں دو حملے کشمیر میں ہوئے ہیں جبکہ ایک حملہ جموں میں ہوا ہے۔ان حملوں میں اب تک 6سکیورٹی اہلکار شہید ہوئے ہیں جبکہ 10دہشت گرد بھی ہلاک ہوئے ہیں۔سکیورٹی ایجنسیوں سے ملی جانکاری کے مطابق جیش محمداور لشکر طیبہ کے دہشت گرد دھماکہ خیز مواد سے بھرے ٹرک اور کار سے حملہ کرنے کی تیاری میں ہیں۔

جیش محمد سال2001میں اس طرح کے فدائین حملے بھی کر چکا ہے۔جب اس کے تین دہشت گردوں نے جموں کشمیر کے اسمبلی پر حملہ کر دیا تھا۔اس حملے کے دوران وسفوٹک سے  بھرا ہوا ٹاٹا سوموکا استعمال کیا گیا تھا۔اس حملے میں 40سے زیادہ لوگوں کی موت ہوئی تھی۔ساتھ ہی تین دہشت گرد بھی مارے گئے تھے۔

کشمیر میں کار بم سے بڑے  فدائین حملے کی تیاری میں ہے دہشت گرد تنظیم جیش محمد اور لشکر طیبہ

دہشت گرد تنظیم جیش محمد اور لشکر طیبہ کشمیرمیں بڑے حملے کی تیاری میں ہے۔

ایک سینئر افسرنے کہا "ہمیں جانکاری ملی ہیکہ جیش محمد اور لشکر طیبہ دونوں بڑے حملے کیلئے ایک ساتھ کام کر رہے ہیں۔کسی ہائی پروفائل جگہ جیسے کہ یا پھر کسی بھی افسر کا گھر،اسمبلی،آرمی کیمپ یا پھر کسی ہوٹل پر یہ وسفوٹک سے بھرے ٹرک یا گاڑی کے ساتھ حملہ کر سکتے ہیں"۔

Loading...

پیر کو فدائین حملے کے بارے میں اس افسر نے کہا کہ لشکر طیبہ کے حملے کے بارے میں ان کے پاس پہلے کچھ جانکاریاں تھیں۔انہوں نے کہا "ہمیں دو دن پہلے پتہ لگا تھا کہ لشکر طیبہ کے دہشت گرد فدائین حملے کیلئے آئے ہیں۔

پانچ فروری کو جموں۔کشمیر کی راجدھانی سرینگر کے مہاراجہ ہری سنگھ اسپتال میں کچھ حملہ آوروں نے فائرنگ کی اور لشکر طیبہ کے بدنام زمانہ کمانڈر نوید جٹ عرف ابو حمزہ کو چھڑاکر لے گئے۔اس فائرنگ میں 2 پولیس اہلکار شہید ہو گئے تھے۔اس واقعہ کے بعد سے جموں ۔کشمیر میں حالات سنگین ہو گئےہیں۔،پاکستان میں ملتان کے رہنے والے نوید جٹ کو وادی میں دیکھا گیا۔سکیورٹی ایجنسیوں کے مطابق نوید جٹ کو شوپیاں اور کلگام میں دیکھا گی۔کہا جا رہا ہیکہ  نوید جٹ فدائین حملے کو انجام دے سکتا ہے۔

نوید جٹ وادی میں دہشت گرد گروپ کو ایک بار پھر سے کھڑا کرنے میں لگ گیا ہے ذرائع کا کہنا ہیکہ جیش محمد کے چار سے چھ غیر ملکی دہشت گردگزشتہ سال دسمبر کے آخری ہفتے میں وادی میں گھسے ہیں۔

 

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز