کٹھوعہ معاملہ:بچی کے والد نے سپریم کورٹ میں لگائی گہار،2 بجے سماعت

کٹھوعہ میں 8 سال کی معصوم بچی کے ساتھ ہوئے اجتماعی عصمت دری اور قتل معاملے میں بچی کے والد نے سپریم کورٹ میں گہار لگائی ہے۔متاثرہ مہلوک بچی کے والد نے سپریم کورٹ سے سکیورٹی کی مانگ کرتے ہوئے معاملے کو باہر منتقل کرنے کی اپیل کی ہے۔

Apr 16, 2018 12:25 PM IST | Updated on: Apr 16, 2018 12:25 PM IST

کٹھوعہ میں 8 سال کی معصوم بچی کے ساتھ ہوئے اجتماعی عصمت دری اور قتل معاملے میں بچی کے والد نے سپریم کورٹ میں گہار لگائی ہے۔متاثرہ مہلوک بچی کے والد نے سپریم کورٹ سے سکیورٹی کی مانگ کرتے ہوئے معاملے کو باہر منتقل کرنے کی اپیل کی ہے۔اس دوران چنڈی گڑھ میں معاملے کو منتقل کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔سپریم کورٹ آج دوپہ 2 بجے سماعت کرے گا۔

جموں کشمیر کے کٹھوعہ ضلع میں 8 سال کی ایک بچی کے ساتھ اجتماعی عصمت دری اور قتل معاملے کو لیکر ملک بھر میں غصہ ہے۔

کٹھوعہ معاملہ:بچی کے والد نے سپریم کورٹ میں لگائی گہار،2 بجے سماعت

متاثرہ مہلوک بچی کے والد نے سپریم کورٹ سے سکیورٹی کی مانگ کرتے ہوئے معاملے کو باہر منتقل کرنے کی اپیل کی ہے۔

جموں کشمیر پولیس کی کرائم برانچ نے پیر کو چیف جسٹس مجسٹریٹ کی عدالت میں15 صفحات کی چار ج شیٹ داخل کی۔اس میں اس میں بکروال کمیونٹی کی بچی کے اغوا ،ریپ،اور اس کے قتل کو لیکر رونگٹے کھڑے کر دینے والے خلاصے ہوئے ہیں۔الزام ہے کہ 8 سال کی معصوم بچی کو جنوری میں ایک ہفتے تک کٹھوعہ ضلع کے ایک گاؤں کے مندر میں یرغمال بناکر رکھا گیاتھا اور اسے نشیلی اشیا دیکر اس کے ساتھ بار ۔بار ریپ کیا گیا اور بعد میں اس کا قتل کر دیا گیا تھا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز