خانقاہ عالیہ رائے پورکے مرشد و سجادہ نشیں مفتی عبد القیوم رائے پوری کا انتقال، طویل عرصہ سے تھے بیمار

Feb 13, 2018 04:54 PM IST | Updated on: Feb 13, 2018 04:58 PM IST

سہارنپور: عالمی شہرت یافتہ خانقاہ عالیہ رائے پور ، ضلع سہارن پورکے مرشد و سجادہ نشیں حضرت مولانامفتی عبد القیوم رائے پوری کا آج صبح یہاں طول علالت کے بعدانتقال ہوگیا۔ وہ طویل عرصہ سے صاحب فراش تھے۔ ان کی عمر تقریباً 85سال تھی۔ان کے پسماندگان میں دو لڑکیاں ہیں۔ ان کی اہلیہ کا انتقال پہلے ہی ہوچکا ہے۔وہ رائے پور کے ہی رہنے والے تھے اور ان کی فراغت مدرسہ مظاہرہ علوم سہارنپور سے ہوئی تھی۔ فراغت کے بعد وہ وہیں مدرس ہوگئے اور علیا درجے کے استاذ تھے۔ مدرسہ مظاہر علوم کی تقسیم کے بعد انہوں نے دونوں کے ساتھ رہنا گوارہ نہیں کیا اور رائے پور منتقل ہوگئے۔ خانقاہ میں درس و تدریس اور تزکیہ نفس میں مشغول ہوگئے۔

مولانا طویل عرصہ سے صاحب فراش تھے اور کسی سے بات چیت نہیں کرتے تھے بلکہ خاموش رہتے تھے۔ ان کے متوسلین اور خانقاہ سے فیض یافتگاہ پوری دنیا میں پھیلے ہوئے ہیں۔ انھوں نے شہر کی تگ و دواور زمانے کے نیرنگیوں سے دور رہ کر ایک پسماندہ گاؤں میں بیٹھ کر جس طرح خلق خدا کے قلب و باطن کی صفائی اوران کے تزکیہ کا دینی فریضہ انجام دیاہے، وہ ہندستان اور بر صغیر کی اسلامی تاریخ کے صفحات پر تا دیر ثبت رہے گا۔ان کی سوانح پر کئی کتائیں لکھی گئی ہیں۔

خانقاہ عالیہ رائے پورکے مرشد و سجادہ نشیں مفتی عبد القیوم رائے پوری کا انتقال، طویل عرصہ سے تھے بیمار

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز