للت مودی نے کی پھر مہندر سنگھ دھونی کو تنازعات میں گھسیٹنے کی کوشش ، لگایا یہ الزام

May 08, 2017 11:01 PM IST | Updated on: May 08, 2017 11:01 PM IST

این سری نواسن سے جاری جنگ میں ایک بار پھر آئی پی ایل کے سابق چیئرمین للت مودی نے ٹیم انڈیا کے سابق کپتان مہندر سنگھ دھونی کو تنازعات میں گھسیٹنے کی کوشش کی ہے۔ انہوں نے سوشل ویب سائٹ انسٹاگرام پر ایک لیٹر اپ لوڈ کیا ہے، جو کہ ان کے مطابق دھونی کا اپائنٹمنٹ لیٹر ہے۔ مودی کا یہ دعوی ہے کہ یہ لیٹر کسی اور کی کمپنی سے نہیں ہے، بلکہ چنئی سپر کنگس کے مالک اور بی سی سی آئی کے برخاست چیئرمین این سری نواسن کی کمپنی کا ہے۔ جی ہاں لیٹر کے مطابق دھونی کو انڈیا سیمنٹ کمپنی کے چنئی آفس میں نائب صدر (مارکیٹنگ) کے طور مقرر کیا گیا تھا۔ خیال رہے کہ للت مودی نے چیمپئنز ٹرافی کے آغاز سے عین قبل یہ لیٹر شیئر کیا ہے۔

تین صفحے کے اس لیٹر میں دھونی کو ملنے والے پیسے کا بھی ذکر کیا گیا ہے۔ مودی نے دھونی پر الزام لگاتے ہوئے اس بات پر حیرانی ظاہر کی کہ ٹیم انڈیا میں گریڈ اے زمرے کے کھلاڑی مہندر سنگھ دھونی کی ماہانہ آمدنی صرف 43000 روپے لکھی گئی ہے۔ علاوہ ازیں کئی خصوصی الاونس بھی ہیں۔ ساتھ ہی للت مودی نے سابق بی سی سی آئی افسر این سری نواسن، راجیو شکلا اور مرکزی وزیر ارون جیٹلی کی تصاویر بھی پوسٹ کی ہیں۔ مودی نے اس پوسٹ کے ذریعہ سری نواسن پر آئی پی ایل کے دوران چنئی سپر کنگس کو فائدہ پہنچانے کا الزام لگایا ہے۔

للت مودی نے کی پھر مہندر سنگھ دھونی کو تنازعات میں گھسیٹنے کی کوشش ، لگایا یہ الزام

انہوں نے اپنے پیغام میں لكھا کہ ایسا صرف ہندوستان میں ہی ہو سکتا ہے۔ بی سی سی آئی کے پرانے محافظوں کی طرف سے مسلسل قوانین کی خلاف ورزی کی جاتی رہی ہیں، لیکن جو مجھے سب سے زیادہ عجیب لگا وہ ایم ایس دھونی کا یہ اپائنٹمنٹ لیٹر ہے۔ آخر کیوں؟ 100 کروڑ روپے سالانہ کمانے والا کھلاڑی سری نواسن کا ملازم بننے کے لئے تیار ہو گا؟

للت مودی کا یہ پوسٹ جلد ہی سوشل میڈیا پر وائرل بھی ہو گیا۔ للت مودی جو اس وقت ملک سے باہر ہیں ، اکثر بی سی سی آئی پر اس طرح کے الزامات لگاتے رہتے ہیں۔ اگرچہ اس بار انہوں نے مہندر سنگھ دھونی کو بھی اس تنازع میں گھسیٹنے کی کوشش کی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز