لکھنؤ یونیورسٹی میں ہرسال ملک زادہ منظور احمد یادگاری خطبہ پیش کئے جانے کا اعلان

Jan 08, 2017 08:43 PM IST | Updated on: Jan 08, 2017 08:43 PM IST

لکھنؤ : لکھنؤ یونیورسٹی کے شعبہ اردومیں ہرسال ملک زادہ منظور احمد یادگاری خطبہ پیش کیا جائے گا ۔ شعبہ اردو کے صدر ڈاکٹر عباس رضا نیّر نے اس کا اعلان کیا۔ انہوں نے بتایا کہ ملک زادہ منظور احمد کی زبان و ادب سے متعلق خدمات کو بھلایا نہیں جا سکتا۔ انہوں نے یہ باتیں لکھنؤ یونیورسٹی میں غالب کا اندازِ بیان کے عنوان سے منعقدہ ایک پروگرام میں کہیں۔

پروگرام میں غالب اور ملک زادہ منظور احمد کو ایک ساتھ یاد کئے جانے سے یہاں موجودطلبہ و دیگر سامعین کو کئی ادوار پر محیط ادبی و لسانی منظرنامے سے واقفیت حاصل ہوئی۔ ساتھ ہی ساتھ شعبہ اردومیں ہرسال ملک زادہ منظور احمد یادگاری خطبہ پیش کئے جانے کے اعلان سے حاضرین میں خوشی کی لہر بھی دوڑ گئی۔

لکھنؤ یونیورسٹی میں ہرسال ملک زادہ منظور احمد یادگاری خطبہ پیش کئے جانے کا اعلان

اس موقع پر پروفیسر شارب ردولوی نے اپنے خصوصی خطبے میں کہا کہ غالب کو عجلت میں نہیں سمجھا جا سکتا ۔ ان کی شاعری اور شخصیت کو سمجھنے کے لئے بہت گہرائی میں اترنے کی ضرورت ہے۔

یہ پروگرام ملک زادہ منظور احمد کی یاد میں منعقد کیا گیا ، اس لیے ان کی شخصیت اور علم و فن پر بھی تفصیلی گفتگو کی گئی ۔ مقررین نے ملک زادہ منظور احمد کے طویل علمی و ادبی سفرکے حوالےسے ان کے کارناموں کا ذکر کیا اور انہیں مجاہد اردو کے طورپر یاد کیا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز