امرناتھ یاترا پر حملہ : لشکر طیبہ کا ہاتھ ہونے کا خدشہ ، وزارت داخلہ کی ہنگامی میٹنگ ، یاترا رہے گی جاری

Jul 11, 2017 12:01 AM IST | Updated on: Jul 11, 2017 12:04 AM IST

نئی دہلی : جموں و کشمیر میں امرناتھ یاتریوں پر حملے کے فورا بعد پی ایم او حرکت میں آ گیا ہے۔ وزارت داخلہ نے حملے کے پیچھے لشکر کا ہاتھ ہونے کا خدشہ ظاہر کیا ہے۔ وہیں این ایس اے اجیت ڈوبھال ساؤتھ بلاک پہنچے اور وزارت داخلہ نے اعلی حکام کے ہنگامی میٹنگ میٹنگ کی ۔ وزارت داخلہ نے کہا ہے کہ یہ حملہ دہشت گردوں نے امرناتھ مسافروں کو ہی نشانہ بنا کر کیا تھا ۔

وزارت داخلہ کے ذرائع کے مطابق ابتدائی تفتیش میں اس حملہ میں لشکر کے ہاتھ کا خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے۔ دہشت گردوں کے ایک ہی گروپ نے کشمیر میں دونوں حملوں کو انجام دیا ہے۔وزارت داخلہ کے ذرائع کے مطابق حملہ کے باوجود امرناتھ یاترا جاری رہے گی اور اس کو ملتوی نہیں کیا جائے گا ۔ علاوہ ازیں جلد ہی ایک اعلی سطحی وفد بھی کشمیر کا دورہ کرے گااور حالات کی جائزہ لے گا۔

امرناتھ یاترا پر حملہ : لشکر طیبہ کا ہاتھ ہونے کا خدشہ ، وزارت داخلہ کی ہنگامی میٹنگ ، یاترا رہے گی جاری

ادھر وزیر اعظم مودی نے امرناتھ یاتریوں پر حملے کی مذمت کی ہے۔ انہوں نے ٹویٹ کر کے کہا کہ اس حملے میں جن لوگوں نے اپنوں کو کھویا ہے، ان سے ہماری تعزیت ہے۔ حملہ میں زخمیوں کے ساتھ ہماری پوری ہمدردی ہے، ہندوستان ایسے حملوں سے نہیں جھکے گا۔ وزیر اعظم مودی نے حملے کے بعد جموں و کشمیر کی وزیر اعلی محبوبہ مفتی اور گورنر این این ووہرا سے بات چیت کی۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز