سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ معاملہ پر لوک سبھا کی کارروائی 12 بجے تک ملتوی

نئی دہلی۔ سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ اور سابق نائب صدر حامد انصاری کی پاکستانی نمائندوں کے ساتھ ملاقات کے معاملہ پر اپوزیشن کے ہنگامے کی وجہ سے لوک سبھا کی کارروائی دوپہر 12 بجے تک کے لئے ملتوی کر دی گئی۔

Dec 18, 2017 12:22 PM IST | Updated on: Dec 18, 2017 12:22 PM IST

نئی دہلی۔ سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ اور سابق نائب صدر حامد انصاری کی پاکستانی نمائندوں کے ساتھ ملاقات کے معاملہ پر اپوزیشن کے ہنگامے کی وجہ سے لوک سبھا کی کارروائی دوپہر 12 بجے تک کے لئے ملتوی کر دی گئی۔ کارروائی شروع ہوتے ہی اسپیکر سمترا مہاجن نے گزشتہ دنوں دریائے کرشنا میں ہونے والے کشتی حادثے، اوكھي طوفان اور بیرون ملک میں مارے گئے بے گناہوں کی موت پر غم کا اظہار کیا۔ انہوں نے مختلف مقامات پر ہوئے دہشت گردانہ حملوں کی مذمت بھی کی۔ اس کے بعد ایوان میں کچھ دیر خاموشی رکھی گئی۔

اسپیکر نے جیسے ہی وقفہ سوالات شروع کرتے ہوئے پہلا سوال پوچھنے کے لئے مسٹر کریٹ سومیا کا نام لیا، اپوزیشن ارکان کھڑے ہوئے اور منموہن معاملہ پر وزیر اعظم کی وضاحت کا مطالبہ کرنے لگے۔ وزیر اعظم نریندرمودی اس وقت ایوان میں موجود نہیں تھے۔ ایوان میں کانگریس کے لیڈر ملک ارجن كھڑگے نے کھڑے ہو کر اپنی بات رکھنے کی کوشش کی۔ اس دوران اپوزیشن اور برسراقتدار پارٹی کے رکن زور زور سے بولنے کی کوشش کرتے رہے۔ بھارتیہ جنتاپارٹی کے رکن 'ہر ہر مودی' کے نعرے لگا رہے تھے۔

سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ معاملہ پر لوک سبھا کی کارروائی 12 بجے تک ملتوی

اسپیکر سمترا مہاجن: فائل فوٹو۔

Loading...

شور شرابے کے درمیان مسز مہاجن نے ایوان کی کارروائی دوپہر 12 بجے تک کے لئے ملتوی کر دی۔

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز