اچھی خبر ، اب اتراکھنڈ حکومت مدرسہ بورڈ کے سرٹیفکیٹ کو بھی شکشا پریشد کے مساوی کرے گی تسلیم

Sep 08, 2017 07:03 PM IST | Updated on: Sep 08, 2017 07:03 PM IST

دہرہ دون : اتراکھنڈ حکومت جلد ہی ریاست کے مدارس کے ہزاروں طالب علموں کو بڑی سوغات دینے جا رہی ہے ۔ مدرسہ بورڈ کی دسویں اور بارہویں کے سرٹیفکیٹ کو شکشا پریشد کے مساوی تسلیم کرنے کے ساتھ ہی اب اس کو ریاست سے بڑھا کر قومی سطح تک منظوری دینے کی کارروائی آخری مرحلے میں ہے۔

اتراکھنڈ میں مدرسہ بورڈ کے امتحانات کے بعد ہزاروں طلبہ کے سامنے سب سے بڑا مسئلہ اس کے سرٹیفکیٹ کی منظوری کا کھڑا ہوتا ہے، جس کی وجہ سے اعلی تعلیم حاصل کرنے میں اس کو انتہائی دشواریوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے ۔ ای ٹی وی نے وقتا فوقتا حکومت کے سامنے مدارس کے طالب علموں کی پریشانیوں کو اٹھایا تھا ۔ تاہم اب مدرسہ بورڈ کی سند کو شکشا پریشد کی سند کے مساوی مانا جائے گا۔

اچھی خبر ، اب اتراکھنڈ حکومت مدرسہ بورڈ کے سرٹیفکیٹ کو بھی شکشا پریشد کے مساوی کرے گی تسلیم

مدرسہ بورڈ کی اسناد کو لے کر ڈی جی تعلیم اور مدرسہ بورڈ کے ڈائریکٹر کپتان الوک شیکھر تیواری نے بتایا کہ کونسل آف بورڈ آف اسکول ایجوکیشن ان انڈیا (سی او بی ایس ای) کے ذریعہ مدرسہ بورڈ کو منطوری دینے کی کوشش کی جا رہی ہے ، جس سے ہزاروں مدرسہ طلبہ کو ملک بھر میں کہیں بھی مزید اعلی تعلیم حاصل کرنے میں کوئی مشکلات کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا ۔

مدرسہ بورڈ کو ایک نئی شناخت دینے کی اس کوشش کو دہرادون میں مدرسہ ایسوسی ایشن نے بہتر قدم بتا کر اس کا استقبال کیا ہے ۔ مدارس سے وابستہ افراد کا کہنا ہے کہ اگر مدارس کے سرٹیفکیٹ کو شکشا پریشد کے سرٹیفکیٹ کے مساوی تسلیم کیا جاتا ہے ،تو اس سے تعلیم وتربیت کے میدان میں مسلم طالب علموں کا مستقبل بہتر ہوگا۔

ریاست میں ایسے مسلم طالب علموں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے ، جو اعلی تعلیم حاصل کرنا چاہتے ہیں ۔ ایسے میں اگر مدرسہ بورڈ کی دسویں اور بارہویں کی اسناد کو سی او بی ایس ای کے ذریعے شکشا پریشد کے برابر کا درجہ حاصل ہو جاتا ہے تو اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ مسلمان بچے آسانی سے مرکزی دھارے میں شامل ہوسکتے ہیں اور یونیورسٹیوں اور کالجوں میں ان کو اپنا مستقبل سنوارنے میں مدد ملے گی ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز