مجلس علماء ہند کی شیعوں سے تین طلاق کے معاملہ میں مداخلت نہ کرنے کی اپیل

Apr 13, 2017 12:49 PM IST | Updated on: Apr 13, 2017 12:49 PM IST

لکھنؤ۔ مجلس علماء ہند کے جنرل سکریٹری مولانا کلب جواد نے کہا ہے کہ گائے کے تحفظ ، مسجد مندر اور تین طلاق کے نام پر ملک میں جو ماحول بنایا جا رہا ہے اس سے مختلف مذاہب کے  لوگوں کے مابین فاصلے بڑھ رہے ہیں ۔ لکھنؤ میں مجلس علماء ہند کی میٹنگ کے بعد مولانا نے مسلمانوں سے اپیل کی ہے کہ وہ ایسا کوئی کام نہ کریں جس سےہندو بھائیوں کے جذبات مجروح ہوں کیونکہ ملک کو نفرت کی نہیں محبت کی ضرورت ہے۔ انہوں نے مسلم طبقے سے  اتفاق  واتحاد قائم رکھنے کی اپیل  کی ۔

مجلس علماء ہند کی جانب سے منعقد میٹنگ میں ان حساس موضوعات پر تبادلہٗ خیال کیا گیا جن کی بنیاد پرسماج کو تقسیم کرنے کی سازش کی جارہی ہے۔ مولانا کلب جواد کا ماننا ہے کہ شر پسند عناصر ایک منظم سازش کے تحت ایسا کررہے ہیں لیکن ایسے نازک حالات میں مسلمانوں کو چاہئے کہ وہ احتیاط واعتدال کا دامن نہ چھوڑیں ۔ مولانا نے کہا کہ ان موضوعات کے علاوہ طلاق کے مسئلے پر بھی خوب بیان بازی اور سیاست کی جارہی ہے۔ مولانا کلب جواد کے مطابق شیعہ پرسنل لا بورڈ سے منسلک کچھ لوگ حکمرانوں سے عہدے اور منصب حاصل کرنے کے لئے تین طلاق پر غیر ضروری بیان دے کر حکومت کو گمراہ کرنے کی کوشش کررہے ہیں ۔

مجلس علماء ہند کی شیعوں سے تین طلاق کے معاملہ میں مداخلت نہ کرنے کی اپیل

مجلس علماء ہند کی میٹنگ میں شیعوں کے حقوق کی بازیابی کے لئے بھی آوازبلند کی گئی ۔علمائے کرام نے کہا کہ شیعہ طبقہ ابھی تک اپنے بنیادی حقوق کی بازیابی کے لئے ہی جد وجہد کر رہا ہے لہٰذا حکومت کو چاہئے کہ وہ اس ضمن میں خصوصی حکمت عملی وضع کر کے لوگوں کو ان کے حقوق فراہم کرے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز