تین طلاق پرہنگامہ مذہب اسلام اور مسلمانوں کے وقار کو ختم کرنے کی کوشش: مولانا خالد رشید

May 13, 2017 01:32 PM IST | Updated on: May 13, 2017 01:32 PM IST

لکھنؤ  ۔ تین طلاق کے نام پر صرف اور صرف سیاست کی جا رہی ہے ۔ مذہب اسلام اور مسلمانوں کے وقار کو ختم کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ ان خیالات کا اظہار اسلامک سینٹر آف انڈیا کی جانب سے لکھنؤ میں کیا گیا۔ پرسنل لا بورڈ کے اہم رکن خالد رشید فرنگی محلی نے کہا کہ عورتوں کےاستحصال اوران پر مظالم کے معاملات مسلمانوں سے زیادہ دوسرے مذہب کے لوگوں میں ہیں لیکن نہ ان پر بات کی جا رہی ہے اور نہ انہیں روشنی میں لایا جارہا ہے۔ مقررین نے اس موقع پر کہا کہ طلاق ایک ایسا موضوع ہے جس پر مودی سے یوگی تک عالم سے جاہل تک کوئی بھی بول سکتا ہے۔ سیاست نے تو جیسےطلاق کے نام پر تماشا کرنے کا فیصلہ کر رکھا ہے۔ رہی سہی کمی ان ٹی وی چینلوں نے پوری کردی ہے جو نقاب پوش اور بکاؤ چہروں کےساتھ جاہلوں کی بھیڑ اکٹھی کرتے ہیں اور ایک داڑھی ٹوپی والےعام انسان کوعالم بنا کر بحث شروع کردیتے ہیں ۔ مضحکہ خیزسوال ہوتے ہیں۔ تالیاں بجتی ہیں۔ ایک مخصوص مذہب کی توہین کی جاتی ہے اورتماشہ اگلے شو تک کے لئےملتوی کردیا جاتا ہے ۔

مولانا خالد رشید  نے کہا کہ بہت سے لوگ شریعت کےشین سے بھی واقف نہیں اور سوال ایسے کرتے ہیں جیسےاسلام کی ٹھیکہ داری انہیں کو ملی ہے۔ انہوں نے کہا کہ  کہ اعداد وشمار اور درست حقائق  سامنے رکھ کر گفتگو کی جائے تو طلاق اور مظالم کا تناسب ہندو مذہب میں کہیں زیادہ ہے لیکن اس طرف نہ کوئی توجہ دیتا ہے اور نہ کسی کو اس طبقے کی خواتین کی فکر ہے۔ معروف سماجی کارکن طاہرہ حسن بھی یہی مانتی ہیں کہ استحصال جبر وتشدد اورنا انصافی کے معاملے دوسرے مذاہب میں بھی کم نہیں لیکن نشانہ صرف مسلم خواتین کو ہی بنایا جا رہا ہے ۔

تین طلاق پرہنگامہ مذہب اسلام اور مسلمانوں کے وقار کو ختم کرنے کی کوشش: مولانا خالد رشید

مولانا خالد رشید فرنگی محلی

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز