دیوبند میں مولانا مسعود مدنی پر عدالت کے احاطے میں ہندو تنظیموں کا حملہ ، مارپیٹ کی کوشش ، بی جے پی لیڈر سمیت کئی افراد کے خلاف کیس درج

Mar 31, 2017 08:18 PM IST | Updated on: Mar 31, 2017 08:18 PM IST

دیوبند : اترپردیش میں سہارنپور کے دیوبند میں کچھ ہندو تنظیموں کے کارکنوں اور وکلا نے آج مولانا مسعود مدنی پر عدالت کے احاطے میں حملہ کر دیا۔ تاہم پولیس نے مشتعل تنظیموں کے کارکنوں کی طرف سے مسعود مدنی کو پولیس گاڑی سے باہر کھینچنے کی کوشش ناکام بنا دی۔ خیال رہے کہ مولانا پر آبروریزی کا الزام لگایا گیا ہے اور اسی سلسلہ میں ان کو آج عدالت میں پیشی کیلئے لایا گیا تھا۔

مولانا مسعود مدنی نے موقع پر پہنچے میڈیا سے کہا کہ ان کی زندگی کو خطرہ پیدا ہو گیا تھا۔ بڑی مشکل سے ان کی جان بچی۔ مسعود مدنی راشٹریہ لوک دل (آر ایل ڈی) کے سابق ممبر پارلیمنٹ اور جمعیت علماء ہند کے قومی جنرل سکریٹری مولانا محمود مدنی کے چھوٹے بھائی ہیں۔ مسعود مدنی گزشتہ 18 مارچ سے سہارنپور کے جیل میں بند ہیں۔ آج مقدمے کی پیشی پر وہ ایڈیشنل ضلع مجسٹریٹ دیوبند رام نیتر سنگھ یادو کی عدالت میں پیشی پر آئے تھے۔ عدالت نے ان کا ریمانڈ بڑھاكر دوبارہ جیل بھیجنے کے احکامات دیئے۔

دیوبند میں مولانا مسعود مدنی پر عدالت کے احاطے میں ہندو تنظیموں کا حملہ ، مارپیٹ کی کوشش ، بی جے پی لیڈر سمیت کئی افراد کے خلاف کیس درج

پولیس نے بتایا کہ حملہ آوروں کے خلاف نامزد رپورٹ درج کی گئی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ جب مسعود مدنی پیشی سے باہر آکر عدالت کے احاطے میں پولیس گاڑی میں بیٹھے تھے ، تو لاٹھی ڈنڈوں سے لیس 25 سے زیادہ مختلف تنظیموں کے کارکنان اور وکلا کی طرف سے حملہ کرکے گاڑی کا شیشہ توڑ دیا۔ مدنی کو گھونسوں سے مارا پیٹا۔ مشتعل لوگوں نے جم کر نعرے بازی کی۔ ان کا الزام تھا کہ پولیس مسعود مدنی سے ساز باز کئے ہوئے ہے اور اسے جیل کی بجائے بچہ جیل میں رکھ کر تمام سہولیات دی جا رہی ہے۔ پولیس نے آبروریزی میں شامل اس کے ساتھیوں کو ابھی تک گرفتار نہیں کیا۔

پولیس نے آج ہونے والے حملے کی ويڈيوگرافی میں بہت سے لوگوں کے نام کی شناخت کر لی ہے ۔ اس میں بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) دیوبند شہر صدر گجراج رانا، دیہات صدر اوپیندر چودھری، ایشان گوڑ، بجرنگ دل کی وکاس تیاگی وغیرہ کے خلاف نامزد رپورٹ میں درج کرائی ہے۔ باقی حملہ آوروں کی شناخت کی جا رہی ہے۔ حملہ کرنے والوں میں سے ابھی تک کسی کی گرفتاری نہیں کیا گیا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز