مودی حکومت کی شہ پر سرمایہ داروں کی بڑھتی بالادستی جمہوریت کیلئے سنگین خطرہ : و مایاوتی

مایاوتی نے یہاں کہاکہ عام تصور ہے کہ بی جےپی بڑے سرمایہ داروں کے اشارے پر ہی چلنے والی پارٹی ہے، صد فیصد سچی بات ہے۔

Aug 20, 2017 06:07 PM IST | Updated on: Aug 20, 2017 06:07 PM IST

لکھنؤ: بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) سربراہ نے آج الزام لگایا کہ مرکز کی نریندر مودی حکومت کی شہ پر سرمایہ داروں کی بڑھتی بالادستی جمہوری نظام پر سنگین خطرہ ہے۔ محترمہ مایاوتی نے یہاں کہاکہ عام تصور ہے کہ بی جےپی بڑے سرمایہ داروں کے اشارے پر ہی چلنے والی پارٹی ہے، صد فیصد سچی بات ہے۔ حال ہی میں شائع ایسوسی ایشن آف ڈیموکریٹک ریفارم (اے ڈی آر) کے تازہ اعداد و شمار نے بھی یہ پوری طرح سے صحیح ثابت کردیا ہے۔

انہوں نے سوال کیا کہ سرمایہ داروں کا مفاد چاہنے والی بی جے پی غریب اور کسان کا خیرخواہ کس طرح ہوسکتی ہے۔ بی ایس پی سربراہ نے کہاکہ اعداد و شمار گواہی دیتے ہیں کہ بی جے پی حکومتیں ایک کے بعد ایک عوام مخالف، کسان مخالف اور سرمایہ داروں کے حق میں فیصلے کیوں کرتے جا رہے ہیں۔

مودی حکومت کی شہ پر سرمایہ داروں کی بڑھتی بالادستی جمہوریت کیلئے سنگین خطرہ : و مایاوتی

بی ایس پی سربراہ مایاوتی: فائل فوٹو

محترمہ مایاوتی نےکہاکہ اے ڈی آر کے شائع اعداد و شمار کے مطابق بی جے پی نے کچھ سرمایہ داروں سے 13۔2012 سے 16۔2015 کے مابین اپنے حساب کتاب والے کُل عطیہ کا 92 فیصد یعنی تقریباً 708 کروڑ روپئے لیا ہے۔ اسی طرح دیگر ذرائع سے کتنا زیادہ پیسہ لیا گیا ہوگا، اس کا اندازہ بی جے پی کے شاہی خرچوں سے بہ آسانی لگایا جا سکتا ہے۔

انہوں نے کہاکہ سرمایہ داروں کے تعاون اور عطیات سے بی جے پی نے ہندستانی سیاست اور حکومت میں اپنی بے جا مداخلت میں اضافہ کیا ہے، جس کی وجہ سے ہر طرح کا حربہ اختیار کرنے کا کھیل بن کر رہ گیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ الیکشن کمیشن او پی راوت ایک پروگرام میں کہہ چکے ہیں کہ ’انتخابی ضابطہ اخلاق کو طاق پر رکھ کر ہر قیمت پر الیکشن میں جیت حاصل کرنا موجودہ دور میں سیاست کا نیا معیار بن گیا ہے‘۔ ملک میں اس طرح کی سیاسی گراوٹ انتہائی خطرناک ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز