مسلم پنچایت کا فیصلہ ، گئو کشی کی یا اس کی مدد کی ، تو لگے گا 21 ہزار روپے کا جرمانہ ، حقہ پانی بھی ہوگا بند

Sep 13, 2017 11:15 PM IST | Updated on: Sep 13, 2017 11:15 PM IST

میوات : میوات میں مسلمانوں کی ایک پنچایت نے گئو کشی کرنے والوں یا ان کی مدد کرنے والوں پر 21 ہزار روپے کا جرمانہ عائد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس پنچایت کا انعقاد پنہانا علاقہ کے جکھوکر میں ہوا تھا، جس میں پنچ ، سرپنچ ، علما اور دیگر سرکردہ شخصیات نے شرکت کی تھی ۔

ساتھ ہی ساتھ پنچ نے یہ فیصلہ بھی کیا کہ جوا ، سٹہ بازی اور شراب پینے والوں پر 5100 روپے کا جرمانہ عائد کیا جائے گا۔ اتنا ہی نہیں جرم ثابت ہونے پر ملزم کا حقہ پانی بند کرکے سبھی رشتے ختم کرلئے جائیں گے۔ مولانا خالد اور سرپنچ حرمت نے کہا کہ ہریانہ حکومت نے گئو کشی پر پابندی لگا رکھی ہے ۔ وہیں گائے سماج کے ایک طبقہ کی عقیدت سے بھی جڑا ہوا ہے ، اس وجہ سے پنچایت میں گئو کشی کو لے کر بڑے فیصلے لئے گئے۔

مسلم پنچایت کا فیصلہ ، گئو کشی کی یا اس کی مدد کی ، تو لگے گا 21 ہزار روپے کا جرمانہ ، حقہ پانی بھی ہوگا بند

آج کل نوجوانوں میں جوا ، سٹہ بازی اور شراب کا چلن بڑھ گیا ہے ، نشہ کی لت کی وجہ سے گاوں میں چوری ، جھگڑے وغیرہ کے معاملات بڑھ رہے ہیں ، اگر کوئی شخص دوبارہ قصوروار پایا جاتا ہے تو اس کو گاوں سے نکال دیا جائے گا اور ایسے لوگوں سے بات چیت بھی بند کردی جائے گی ۔

پنچایت کے اس فیصلہ کو نافذ کرنے کیلئے ایک 11 رکنی کمیٹی تشکیل دی گئی ہے ، جس میں گاوں کے موجودہ سرپنچ ،سابق سرپنچ ، نمبردار اور پنچوں کے علاوہ مسجدوں کے امام ، مولانا اور اہم افراد کو شامل کیا گیا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز