دہلی سے شاملی کو جانے والی پیسنجر ٹرین میں عالم دین کے قتل کی کوشش

باغپت۔ اترپردیش میں باغپت کوتوالی علاقے میں دہلی سے شاملی کو جانے والی پسنجر ٹرین میں سفر کر رہے مسافروں کے ساتھ کچھ سماج دشمن عناصر نے جم کر مار پیٹ کی اور ایک عالم دین کا گلا دبا کر قتل کرنے کی کوشش گئی۔

Nov 23, 2017 12:43 PM IST | Updated on: Nov 23, 2017 12:44 PM IST

باغپت۔ اترپردیش میں باغپت کوتوالی علاقے میں دہلی سے شاملی کو جانے والی پسنجر ٹرین میں سفر کر رہے مسافروں کے ساتھ کچھ سماج دشمن عناصر نے جم کر مار پیٹ کی اور ایک عالم دین کا گلا دبا کر قتل کرنے کی کوشش گئی۔ واقعہ کی اطلاع ملنے پر گاؤں والوں نے ریلوے اسٹیشن پر پہنچ کر ملزمان کے خلاف کارروائی کی مانگ کی۔

پولیس ذرائع نے آج یہاں بتایا کہ باغپت کے چوهلدا گاؤں کی مسجد کے پیش امام گلزار خان کل دیر رات تقریباً 11:00 بجے دہلی سے شاملی جانے والی پسنجر ٹرین سے اهیڑا آ رہے تھے۔ ا ن کا الزام ہے کہ جیسے ہی ٹرین اهیڑا اسٹیشن پر پہنچی تب ہی کچھ سماج دشمن عناصر نے عالم دین کے ساتھ بدسلوکی کرکے اس کے ساتھ مارپیٹ شروع کردی۔ مسٹر خان نے الزام لگایا کہ ان لوگوں نے گلا دبا کرانہیں جان سے مارنے کی کوشش بھی کی،کسی طرح انہوں نے اپنی جان بچائی۔ واقعہ کی واقعہ اطلاع ملنے پر گاؤں کے لوگ ریلوے اسٹیشن پر پہنچے اور ریلوے اسٹیشن پر ہی ملزمان کے خلاف کارروائی کی مانگ کی۔ بعد میں لوگوں نے کوتوالی پہنچ کر بھی ہنگامہ کیا۔

دہلی سے شاملی کو جانے والی پیسنجر ٹرین میں عالم دین کے قتل کی کوشش

شاملی ریلوے اسٹیشن: فائل فوٹو۔

دریں اثنا، گورنمنٹل ریلوے پولیس (جی آر پی) کے تھانہ انچارج نے معاملہ کی معلومات سے انکار کیا ہے۔ دیہاتیوں کا کہنا ہے کہ اگر ملزمان کے خلاف کارروائی نہیں کی گئی تو وہ احتجاج و مظاہرہ کرنے پر مجبور ہوں گے۔ پولیس نے رپورٹ درج کر کے چھان بین شروع کردی ہے۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز