تین طلاق پر مسلم پرسنل بورڈ نے جاری کیا کوڈ آف کنڈکٹ ، شرعی وجہ کے بغیر تین طلاق دینے والوں کے بائیکاٹ کی اپیل

Apr 16, 2017 04:36 PM IST | Updated on: Apr 16, 2017 04:36 PM IST

لکھنو : تین طلاق کے معاملے پر آل انڈیا مسلم پرسنل لاء میں تبدیلی کے مطالبات کو بورڈ نے یکسر مسترد کر دیا ہے۔ لکھنؤ کے ندوہ میں آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کی دو روزہ اہم اجلاس میں 14 اہم فیصلے لئے گئے ، جن میں تین طلاق کے مسئلے پر کوڈ آف کنڈکٹ بھی نافذ کیا گیا۔ساتھ ہی ساتھ انہوں بورڈ نے لوگوں سے تین طلاق پر لگام لگانے کی اپیل کی اور کسی شرعی وجہ کے بغیر تین طلاق دینےو الوں کے بائیکاٹ کا اعلان کیا ۔

آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کی مجلس عاملہ کی میٹنگ بورڈ کے چیئرمین مولانا سید محمد رابع حسنی ندوی کی صدارت میں ہوئی۔ اس موقع پر انہوں نے کہا کہ ملک میں مسلم پرسنل لاء پر عمل کرنے کا مکمل آئینی حق حاصل ہے، مگر ہم سب کی ذمہ داری ہے کہ پرسنل لاء کی خود حفاظت کریں اور اس کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ ہم خود اس پر پوری طرح عمل کریں۔

تین طلاق پر مسلم پرسنل بورڈ نے جاری کیا کوڈ آف کنڈکٹ ، شرعی وجہ کے بغیر تین طلاق دینے والوں کے بائیکاٹ کی اپیل

بورڈ کے اہم فیصلے

مسلمان مسلم پرسنل لاء بورڈ پر مکمل طور پر عمل کر کے اس کی حفاظت کو یقینی بنائے گا۔

بابری مسجد کے سلسلے میں بورڈ سپریم کورٹ کے فیصلے کو ہی قبول ہوگا۔

اسلامی شریعت میں نکاح کے ذریعہ سے ایک مرتبہ جو رشتہ قائم ہو جائے، وہ ہمیشہ کیلئے قائم رہے ، لیکن اگر میاں اور بیوی کے درمیان تنازع ہو جائے ، تو اس سلسلے میں بورڈ کی جانب سے ایک كورڈ آف کنڈکٹ جاری کیا جا رہا ہے، اسی پر عمل کیا جائے۔

جو لوگ کسی شرعی وجہ کے بغیر ایک ساتھ تین طلاق دیں گے، ان کا شرعی بائیکاٹ کیا جائے۔

مسلم پرسنل لاء سے متعلق معاملات کو مسلمان دارالقضا میں ہی حل کرائیں۔

بورڈ کی مسلم وومین ونگ اور ہیلپ لائن کو زیادہ فروغ دیا جائے گا۔

سوشل میڈیا کا زیادہ سے زیادہ استعمال کر کے بورڈ اپنی باتوں کو لوگوں تک اچھی طریقہ سے پہنچائے۔ ساتھ ہی ساتھ اسلام اور شریعت سے متعلق غلط فہمیوں کو دور کرنے کی ہر ممکن کوشش کرے گا۔

بورڈ تمام علماء اور مساجد کے اماموں سے اپیل کرتا ہے کہ اس كورڈ آف کنڈکٹ کو کھلے طور سے پڑھ کر نمازيوں کو ضرور سنائیں اور اس عمل پر زور دیں۔

مسلمان شادی میں فضول خرچي سے گریز کریں اور اس پیسے کو غریب کی تعلیم پر خرچ کریں۔

مسلمان اپنے بچوں کو اعلی تعلیم دیں۔

جن خواتین کے ساتھ طلاق کے بے جا استعمال کے ذریعہ ناانصافی ہوئی ہے، بورڈ ان کی مدد کے لئے ہمیشہ تیار ہے۔

بورڈ تمام مسلم تنظیموں سے اپیل کرتا ہے کہ وہ مسلم خواتین کو ان کے شرعی حقوق دلانے کے لئے اور طلاق شدہ خواتین ، بیواؤں اور بے سہارا خواتین کو ہر ممکن مدد کے لئے تیار رہیں۔

ماں باپ نکاح میں اپنی بیٹیوں کو جہیز دینے کی جگہ جائیداد میں ان ان کا حصہ دیں۔

بورڈ نے مسلمانوں سے یہ بھی اپیل کی ہے کہ سماج کی خدمت کے کاموں کو زیادہ سے زیادہ فروغ دیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز