یوپی میں مسلم سیاسی پارٹیوں میں انتشار، مسلم سیاست میں پائی جا رہی ہے زبردست خلا

May 09, 2017 09:11 PM IST | Updated on: May 09, 2017 09:11 PM IST

الہ آباد۔ یو پی میں بی جے پی کے بر سر اقتدار آنے کے بعد مسلم سیاست سخت بحران کا شکار ہو گئی ہے ۔ ریاست  کی مسلم سیاست میں اس وقت ایک خلا پیدا ہو گیا ہے  ۔ گذشتہ اسمبلی انتخابات میں مسلم سیاسی پارٹیوں کی کراری شکست کے بعد مسلم سیاست کے مستقبل پر بھی سوالیہ نشان لگ گیا ہے ۔ایسے میں مسلم سیاسی پارٹیاں ایک دوسرے کو مورد الزام ٹھرا نے سے باز نہیں آ رہی ہیں  ۔  یو پی کی آبادی میں تقریباً بیس فیصد کا تناسب رکھنے والے مسلمان آج اپنی سیاسی شناخت کی جد و جہد کر رہے ہیں ۔ گذشتہ اسمبلی انتخابات میں ریاست میں سر گرم مسلم سیاسی پارٹیوں نے اپنے اپنے میدواروں کو میدان میں اتارا تھا ۔ لیکن کسی بھی مسلم سیاسی پارٹیوں کا ایک بھی امید وار چناؤ میں کامیاب نہیں ہو پایا ۔ مسلم سیاسی پارٹیوں کی اس کراری شکست کے بعد یو پی کی مسلم سیاست میں ایک خلا سا پیدا ہو گیا ہے ۔ سیاسی پارٹیاں اپنی  شکست کی ذمہ داری اب ایک دوسرے کے سر ڈالنے لگی ہیں ۔

یو پی کی مسلم سیاسی پارٹیاں اپنی ناکامی کے لیے  بھلے ہی ایک دوسرے کو مورد الزام ٹھرا رہی ہوں لیکن مسلم امور پر گہری نگاہ رکھنے والے افراد کا کہنا ہے کہ اسوقت مسلم سیاست ایک بحرانی دور سے گزر رہی ہے ۔الہ آباد یونیورسٹی کے وائس چانسلر اور تاریخ داں پروفیسر رتن لال ہانگلو کا کہنا ہے کہ مسلمانوں میں صحیح سیاسی شعور اور تعمیری سیاست کی سخت کمی ہے ۔کسی زمانے میں یو پی مسلم سیاست کا گڑھ تصور کیا جاتا تھا ۔ لیکن آج حالت یہ ہے کہ ریاست کی قدیم ترین سیاسی پارٹیوں  کو بھی اپنے وجود کو باقی رکھنا مشکل ہو رہا ہے ۔ ریاست میں مسلم سیاست کے خلا کو پر کرنے کے لئے مسلم سیاسی پارٹیوں کو جلد ہی ایک پلیٹ فارم پر آنے کی سخت  ضرورت ہے ۔

یوپی میں مسلم سیاسی پارٹیوں میں انتشار، مسلم سیاست میں پائی جا رہی ہے زبردست خلا

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز