جنید قتل معاملہ: پرتاپ گڑھ میں مسلم نوجوانوں نے سیاہ پٹّی باندھ کرعیدالفطر کی نماز ادا کی

Jun 27, 2017 04:58 PM IST | Updated on: Jun 27, 2017 04:59 PM IST

پرتاپ گڑھ ۔ اتر پردیش کے پرتاپ گڑھ ضلع میں مسلمانوں میں عیدالفطر کی خوشیوں کے ساتھ اقلیتوں پر حملے اور جنید کے قتل سے غم کا ماحول دیکھا گیا۔ حکومت کی حملہ آور تنظیم کے خلاف چشم پوشی کے سبب احتجاج میں اپنی اپنی بانہہ پر مسلم نوجوانوں نے سیاہ پٹّی باندھ کر عیدالفطر کی نماز ادا کی جبکہ مختلف تنظیموں سے وابستہ لوگوں نے اپنے تاثرات میں اس کو ملک میں اقلیتوں کے خلاف حملے کو منظم سازش قرار دیتے ہوئے حکومت کی چشم پوشی کو قابل مذمت قرار دیا ۔ ملک کے معروف شاعر و مختلف ایوراڈ خصوصی طور سے غالب ایوارڈ سے سرافراز شاعر ساگر ترپاٹھی نے مسلمانوں کے سیاہ پٹّی باندھ کر عید الفطر نماز کی ادایگی پر اپنے تاثرات میں کہا کہ میں اس سے اتفاق نہیں کرتا۔ انہوں نے کہا کہ میں نے جہاں تک اسلام کا مطالعہ کیا ہے اللہ کے رسولؑ کی حدیث کے مطابق یہ عمل درست نہیں ہے۔ اس عظیم تہوار کے روز کے برعکس ہم کسی روز اپنا احتجاج درج کرا سکتے تھے۔ انہوں نے کہا کہ میں پہلے انسان بعد میں ہندو ہوں۔ انسانیت کے ساتھ ظلم قابل مذمت ہے۔ کسی طرح یہ جائز نہیں ہے چاہے کشمیر میں پولیس افسر کا قتل ہو یا معصوم جنید کو صرف اس لیئے قتل کرنا کہ وہ مسلمان تھا یہ صرف صرف دہشت گردی ہے جس کی سخت الفاظ میں مذمت کرتاہوں ۔

انہوں نے کہاکہ آج جنید  کے اہل خانہ کے ساتھ غم میں مزید شریک ہونے کیلئے ہر طرح کی تعاون کی ضرورت ہے اور مجھے ملہوک کے کنبے سے پوری ہمدردی ہے۔ حکومت سے انہوں نے مطالبہ کیا کہ ایسے دہشت گردوں کو سخت سے سخت سزا دی جائے جس سے پھر کسی اخلاق و جنید کا قتل نہ کیا جا سکے۔ جمیعتہ علماء ہند محمود مدنی اتر پردیش کے جنرل سکریٹری مولانا عبدالواحد نے اپنے تاثرات میں کہا کہ سیاہ پٹیّ باندھ کر عیدالفطر کی نماز ادا کرنا درست نہیں ہے ۔ انہوں نے کہا کہ جنید کا قتل پوری انسانیت کا قتل اور کھلی دہشت گردی ہے۔ اس دہشت گردی کے مقابلے کیلئے ہمیں جمہوری اور قانونی طور پر لڑائی کی ضرورت ہے ۔ احتجاج قانونی حق ہے لیکن عید الفطر کے روز احتجاج درج کرانا دہشت گردوں کی حوصلہ افزائ ہے۔ احتجاج کیلئے ہم سب کو اتحاد کا مظاہرہ کرنا ہوگا ۔اتحاد سے ہی احتجاج کامیاب ہوگا۔

جنید قتل معاملہ: پرتاپ گڑھ میں مسلم نوجوانوں نے سیاہ پٹّی باندھ کرعیدالفطر کی نماز ادا کی

گزشتہ ہفتہ دہلی سے پلول جانے والی ای ایم یو میں کچھ لوگوں نے 16 سالہ جنید کا پیٹ پیٹ کر قتل کر دیا تھا۔

وہیں، مائنارٹیز ویلفیئر سوسائٹی کے صدر مولانا تاجدار نے کہا کہ آج ملک میں زیر اقتدار حکومت ایک خصوصی نظریہ کی دیشت گردی کو فروغ دے رہی ہے جس کے سبب ان متعصب تنظیموں کے اراکین کے حوصلے بلند ہیں اور وہ جب جو چاہتے ہیں انجام دے رہے ہیں۔ حکومت پوری طرح ان تشدد کو انجام دینے والی تنظیموں کی چشم پوشی کر ان کے گناہوں پر پردہ ڈال رہی ہے ۔ انہوں نے جنید کے قتل کی سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ملک میں ایک خصوصی ذہنیت کے لوگ جنکے اندر انسانیت کا فقدان ہے وہ دہشت گردی پھیلا کر اقلیتی طبقے کو خوف میں مبتلا کرنا چاہتے ہیں۔ ہمارے نوجوانوں  نے سیاہ پٹّی باندھ کر جو احتجاج درج کرایا ہے اس سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ وہ اب بیدار ہو رہے ہیں اور یہی بیداری سیاسی رخ کو ایک روز تبدیل کر فرقہ پرست طاقتوں کو جواب دے گی۔

مومن کانفرنس کے سابق قومی صدر ڈاکٹر عبدالرشید انصاری نے ملک میں اقلیتوں پر روز بروز ہو رہے حملے و قتل کی سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ جنید کا خون ضائع نہیں جائے گا ۔ نوجوانوں کے ذریعہ سیاہ پٹّی باندھ کر احتجاج انکی بیداری کی علامت ہے اور نوجوان ہی سیاسی ہوا کو تبدیل کر سکتا ہے۔ جنید کے قتل سے مسلم نوجوانوں میں جو جمہوری بیداری پیدا ہوئی ہے اس سے مزید سیاسی رخ میں تبدیلی آئے گی۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز