نجیب احمدکی گمشدگی کا معاملہ : سیشن کورٹ نے نچلی عدالت کے فیصلہ کو کیا خارج

نچلی عدالت نے جے این یو کے ملزم نو طلبہ کو لائی ڈٹیکٹر ٹیسٹ کرانے کو لے کر اپنی رضامندی یا عدم رضامندی کا اظہار کرنے کے لئے عدالت میں پیش ہونے کا حکم دیا تھا

May 03, 2017 09:44 PM IST | Updated on: May 03, 2017 09:44 PM IST

نئی دہلی: دہلی کی ایک سیشن عدالت نے بدھ کو جواہر لال نہرو یونیورسٹی (جے این یو) کے لاپتہ طالب علم نجیب احمد کے معاملہ میں 9 طلبہ کے لائی ڈٹیکٹر ٹیسٹ سے متعلق نچلی عدالت کی طرف سے دئے گئے فیصلے کو مسترد کر دیا ہے ۔ نچلی عدالت نے جے این یو کے ملزم نو طلبہ کو لائی ڈٹیکٹر ٹیسٹ کرانے کو لے کر اپنی رضامندی یا عدم رضامندی کا اظہار کرنے کے لئے عدالت میں پیش ہونے کا حکم دیا تھا۔

ایڈیشنل سیشن جج سدھارتھ شرما نے میٹروپولیٹن مجسٹریٹ کی عدالت کی طرف سے 30 مارچ کو دئے حکم کو مسترد کر دیا اور اس سلسلے میں دہلی پولیس کے بھیجے گئے نوٹس کو بھی منسوخ کر دیا۔

نجیب احمدکی گمشدگی کا معاملہ : سیشن کورٹ نے نچلی عدالت کے فیصلہ کو کیا خارج

تاہم سیشن عدالت نے جانچ حکام کو ملزم طلبہ کا لائی ڈٹیکٹر ٹیسٹ کرانے کے لئے نئے نوٹس بھیجنے کی اجازت دے دی۔ سیشن عدالت نے کہا کہ مجسٹریٹ عدالت کو جانچ حکام کے ذریعہ بھیجے گئے غلط نوٹس کو واپس لینے اور نیا نوٹس بھیجنے کی ہدایت دینی چاہئے تھی۔

ؒخیال رہے کہ ملزم نوطلبہ نے نچلی عدالت کے حکم کو سیشن عدالت میں چیلنج کیا تھا۔ چیف میٹروپولیٹن مجسٹریٹ کی عدالت نے 30 مارچ کو نو طلبہ کو 6 اپریل تک عدالت میں بنیادی طور پر حاضر ہونے اور پالی گرافی ٹیسٹ کرنے پر اپنی رضامندی یا عدم رضامندی سے عدالت کو آگاہ کرنے کا حکم دیا تھا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز