Live Results Assembly Elections 2018

نجیب احمد گمشدگی کیس : طلبہ کے پالی گراف ٹیسٹ سے متعلق سی بی آئی کی عرضی پر فیصلہ محفوظ

جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے گمشدہ طالب علم نجیب احمد کیس میں نو طلبہ کے پالی گراف ٹیسٹ سے متعلق سی بی آئی کی عرضی پر دہلی کی ایک عدالت نے اپنا فیصلہ محفوظ رکھ لیا ہے ۔

Nov 16, 2017 12:01 AM IST | Updated on: Nov 16, 2017 12:01 AM IST

نئی دہلی : جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے گمشدہ طالب علم نجیب احمد کیس میں نو طلبہ کے پالی گراف ٹیسٹ سے متعلق سی بی آئی کی عرضی پر دہلی کی ایک عدالت نے اپنا فیصلہ محفوظ رکھ لیا ہے ۔ ایڈیشنل چیف جوڈیشیل مجسٹریٹ سمر وشال نے سی بی آئی اور جے این یو طلبہ کے وکیلوں کی بحث پوری ہونے کے بعد فیصلہ محفوظ رکھ لیا ۔ خیال رہے کہ اس معاملہ میں سی بی آئی نے نو طلبہ کے خلاف لائی ڈیٹیکٹر ٹیسٹ کا مطالبہ کررکھا ہے۔

طلبہ کی طرف سے پیش وکیل وشو بھوشن آریہ اور اجول کمار نے عدالت کو بتایا کہ قومی انسانی حقوق کمیشن کے مطابق لائی ڈیٹیکٹر ٹیسٹ قانونا جائز نہیں ہے اور اپنی خوشی سے اس کی منظوری نہیں دیتے تک اس کو غیر قانونی مانا جائے گا۔ اتنا ہی نہیں وکیل نے کورٹ سے سی بی آئی کی عرضی رد کرنے کا بھی مطالبہ کیا ۔

نجیب احمد گمشدگی کیس : طلبہ کے پالی گراف ٹیسٹ سے متعلق سی بی آئی کی عرضی پر فیصلہ محفوظ

وکیل نے کہا کہ طلبہ کو ان کا موقف ریکارڈ کرانے کیلئے سمن جاری کرنا کچھ نہیں بلکہ ایک ڈرانے والی کارروائی ہے ۔ اس سے پہلے کی سماعت میں کورٹ نے لائی ڈیٹیکٹر ٹیسٹ کو لے کر سی بی آئی کو جلد عرضی داخل کرنے کی اجازت دیدی تھی ۔

قابل ذکر ہے کہ دہلی ہائی کورٹ نے سی بی آئی کو نچلی عدالت میں اس معاملہ کی سماعت جلد پوری کرنے کیلئے کہا تھا ، جس کے بعد سی بی آئی نے اس سلسلہ میں عرضی داخل کی تھی ۔ جے این یو میں ایم ایس سی فرسٹ ائیر کا طالب علم نجیب 15 اکتوبر 2016 سے ہی لاپتہ ہے۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز