نوٹ بندی اورجی ایس ٹی کے بعد پیٹرول مصنوعات میں اضافہ نےعوام کی کمرتوڑدی: فاروق عبداللہ

نوٹ بندی اور جی ایس ٹی سے پہلے ہی لوگ اقتصادی بدحالی کے شکار تھے اوراب پیٹرول کی قیمتوں میں اضافہ نے کمرتوڑکررکھ دی ہے۔

Sep 12, 2018 07:42 PM IST | Updated on: Sep 12, 2018 07:46 PM IST

سری نگر: نیشنل کانفرنس کے صدرورکن پارلیمان ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے پیٹرول مصنوعات کی بڑھتی ہوئی قیمتوں پرتشویش اوربرہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ نوٹ بندی اور جی ایس ٹی کے اطلاق سے پہلے ہی لوگ اقتصادی بدحالی کے شکار تھے اوراب پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں مسلسل اضافے نے لوگوں کی کمرتوڑکررکھ دی ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس رجحان سے جموں وکشمیر سب سے زیادہ متاثرہوئی ہے کیونکہ پُرآشوب دور سے ہم پہلے ہی اقتصادی طوربہت پیچھے ہیں۔ فاروق عبداللہ نے ان باتوں کا اظہار بدھ کے روز یہاں اپنی رہائش گاہ پرراجوری، بجبہاڑہ ، کپوارہ کے علاوہ کئی وفود کے ساتھ تبادلہ خیالات کرتے ہوئے کیا۔

نوٹ بندی اورجی ایس ٹی کے بعد پیٹرول مصنوعات میں اضافہ نےعوام کی کمرتوڑدی: فاروق عبداللہ

فاروق عبداللہ: فائل فوٹو۔

مرکزی حکومت کو آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا کہ بی جے پی والے اپوزیشن میں آئے روز پٹرول اور گیس کی قیمتوں کو لیکرسڑکوں پر احتجاج اور سینہ کوبی کرتے تھے، لیکن جب سے ان کے ہاتھ میں حکمرانی آئی ہے تب سے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں آسمان چھو رہی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: جموں وکشمیر: نیشنل کانفرنس اورپی ڈی پی کی مخالفت کے بعد ملتوی ہوسکتے ہیں بلدیاتی اورپنچایت الیکشن

انہوں نے کہا کہ جی ایس ٹی کے اطلاق سے جہاں ہماری ریاست بری طرح متاثر ہوئی وہیں ایک منصوبہ بند سازش کے ذریعے ہماری اقتصادی خودمختاری بھی ختم کردی گئی اوراس کام کے لئے پی ڈی پی نے بھر پوراشتراک پیش کیا اورآر ایس ایس کی خوشنودی کے لئے یہ قانون من وعن جموں وکشمیرپرنافذ کردیا۔

فاروق عبداللہ نے مزید کہا کہ پی ڈی پی کی مہربانی سے ہی آج ہم 35 اے کو لیکر فکر مند اور تشویش میں مبتلا ہیں۔ جس وقت اس دفعہ کو لے کرسپریم کورٹ میں عرضی دائرکی گئی پی ڈی پی حکومت نے اس عرضی کا توڑ کرنے کے لئے ذرا برابر بھی کوشش نہیں کی ، اُلٹا مجرمانہ خاموشی اختیار کرکے اس جانب اپنی آنکھوں موند کر رکھی دی۔ اُن کا کہنا تھا کہ اگر نیشنل کانفرنس نے وقت پر دفعہ35اے کو ختم کرنے کی سازشوں سے پردہ فاش نہ کیا ہوتا تو سابقہ پی ڈی پی حکومت نے اس دفعہ کا کام بھی تمام کروا دیا ہوتا۔

یہ بھی پڑھیں:   فاروق عبداللہ کی وارننگ "دفعہ 35 اے پرمرکزی حکومت واضح کرے موقف، ورنہ لوک سبھا الیکشن کا کریں گے بائیکاٹ"۔

ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا کہ ریاست جموں وکشمیر کا مسلم اکثریتی کرداراورخصوصی پوزیشن کو ختم کرنا آرایس ایس، بی جے پی اوردیگر بھگوا جماعتوں کا ابتداء سے ہی مدعا و مقصد رہا ہے اوراسی مقصد کی خاطر پی ڈی پی کا وجود عمل میں لایا گیا۔ انہوں نے اہل ریاست اپیل کی کہ وہ متحدہ ہوکر دشمنوں کو پہچان کر اُن کے مکروہ عزائم کو ناکام بنائیں۔

ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے متعدد وفود کے مسائل اور مشکلات بھی سنے اور ان متعلقہ حکام کے ساتھ رابطہ کرکے ان کے فوری حل کے لئے زوردیا۔

یہ بھی پڑھیں:   جموں و کشمیر :  دفعہ 35 اے کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کی کسی کو اجازت نہیں دی جائے گی : فاروق عبداللہ

 

 

 

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز