ٹیرر فنڈنگ کیس : حزب المجاہدین سرغنہ صلاح الدین کے چاروں بیٹوں سے این آئی اے کی پوچھ گچھ

Mar 14, 2018 07:36 PM IST | Updated on: Mar 14, 2018 07:36 PM IST

نئی دہلی : این آئی اے نے حزب المجاہدین کے سرغنہ صلاح الدین کے چاروں بیٹوں سے جموں و کشمیر میں دہشت گردی کی فنڈنگ کے سلسلہ میں پوچھ گچھ کی ہے۔ خیال رہے کہ اس سلسلہ میں دہشت گرد تنظیم کے سرغنہ کے بیٹے شاہد یوسف کو این آئی اے نے کچھ دنوں قبل ہی گرفتار کیا تھا اور وہ اب تک عدالتی حراست میں ہے ۔ تنظیم سربراہ کے چاروں بیٹوں سید شکیل احمد ، جاوید یوسف ، واحد یوسف اور مجید یوسف سے پوچھ گچھ کی گئی ہے ۔

سید صلاح الدین کا اصلی نام سید محمد یوسف شاہ ہے ، لیکن پاکستانی خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی کی سرپرستی میں 11 نومبر 1991 میں دہشت گرد تنظیم حزب المجاہدین کا سرغنہ بننے کے بعد اس نے اپنا نام بدل کر سید صلاح الدین رکھ لیا تھا ۔ حیرانی کی بات یہ ہے کہ اس دہشت گرد کا پورا کنبہ آج بھی کشمیر وادی میں رہتا ہے۔

ٹیرر فنڈنگ کیس : حزب المجاہدین سرغنہ صلاح الدین کے چاروں بیٹوں سے این آئی اے کی پوچھ گچھ

حزب المجاہدین سرغنہ صلاح الدین۔ فائل فوٹو

حزب المجاہدین سرغنہ صلاح الدین کو 2017 میں ہی امریکہ نے عالمی دہشت گرد قرار دیا تھا ۔ اس کے بعد حزب المجاہدین نے اسے امریکی حکومت کی ہندوستان کو خوش کرنے کی پالیسی قرار دیا تھا۔ عالمی دہشت گرد اعلان کئے جانے کو اس نے ٹرمپ کے ذریعہ مودی کو تھمایا گیا لالی پاپ بتایا تھا۔

سید صلاح الدین ایک کشمیری ہے ، جو پاکستان سے ملنے والی مدد کی بنیاد پر ہندوستان میں دہشت گردانہ سرگرمیاں انجام دیتا ہے ۔ صلاح الدین گزشتہ 27 سالوں سے کشمیر سمیت پورے ہندوستان میں دہشت گردانہ سرگرمیاں انجام دے رہا ہے اور وہ این آئی اے کی موسٹ وانٹیڈ لسٹ میں بھی شامل ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز