الیکشن سے پہلے بجٹ پیش نہ کئے جانے کے لئے اپوزیشن نے الیکشن کمیشن سے کی ملاقات، شیوسینا بھی شامل

Jan 05, 2017 12:42 PM IST | Updated on: Jan 05, 2017 12:42 PM IST

نئی دہلی۔ اپوزیشن نے بجٹ پیش کرنے کی تاریخ پر روک لگانے کے مطالبے پر اتحاد کا مظاہرہ کرنا شروع کر دیا ہے۔ تاریخ میں تبدیلی کو لے کر آج کئی اپوزیشن پارٹیاں الیکشن کمیشن سے ملنے پہنچیں۔ یوپی، پنجاب، گوا سمیت 5 ریاستوں میں انتخابات سے پہلے مودی حکومت 1 فروری کو عام بجٹ پیش کرے گی۔ لیکن کانگریس، ایس پی، جے ڈی یو، بایاں بازو، بی ایس پی سمیت تمام اپوزیشن جماعتوں نے اس پر اعتراض ظاہر کیا ہے۔ اسی مسئلے کو لے کر اپوزیشن لیڈر الیکشن کمیشن سے ملنے پہنچے۔ اس کی قیادت کانگریس لیڈر غلام نبی آزاد نے کی۔ اپوزیشن کی اس مہم میں شیوسینا بھی شامل ہے۔

کمیشن سے ملاقات کے بعد آزاد نے کہا کہ 12 دسمبر کو پارلیمنٹ میں 16 جماعتوں کی میٹنگ میں طے ہوا کہ صدر جی کو خط لکھا جائے کہ حکومت بجٹ کو پہلے لانے پر غور کر رہی ہے۔ ہم نے اپوزیشن کے مطالبات کو قبول کر بجٹ 26 مارچ کو پیش کیا۔ جب تک 5 ریاستوں کے انتخابات نہ ہو جائیں تب تک بجٹ نہ پیش کیا جائے۔ اپوزیشن کے ساتھ احترام کا برتاؤ کرنا چاہئے۔ یہ آئین کے خلاف ہے۔ برسر اقتدار پارٹی کو اس کا فائدہ ملتا ہے۔ الیکشن کمیشن کو حکومت کو بتانا چاہئے کہ اس وقت پر بجٹ نہیں پیش کیا جا سکتا ہے۔ ابھی 8 پارٹیاں ہمارے ساتھ آئی ہیں۔ بجٹ 8 مارچ کے بعد پیش کیا جائے، 31 مارچ تک کبھی بھی بجٹ پیش کیا جا سکتا ہے۔ اگر وہ ہماری بات نہیں مانتے ہیں تو یہ کیسی جمہوریت ہے، سب کو یکساں مواقع ملنے چاہئیں۔

الیکشن سے پہلے بجٹ پیش نہ کئے جانے کے لئے اپوزیشن نے الیکشن کمیشن سے کی ملاقات، شیوسینا بھی شامل

چار فروری کو انتخابات، یکم فروری کو بجٹ

اپوزیشن کا کہنا ہے کہ بی جے پی عام بجٹ پیش کر کے الیکشن میں فائدہ اٹھانے کی کوشش کرے گی اور یہ ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی ہو گی۔ اپوزیشن جماعتیں سوال اٹھا رہی ہیں کہ کیا انتخابات سے تین دن پہلے بجٹ پیش کیا جا سکتا ہے؟ انہوں نے انتخابات کے بعد بجٹ پیش کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ بتا دیں کہ پنجاب-گوا میں 4 فروری کو پولنگ ہونی ہے۔

ایس پی سپریمو مایاوتی نے ایک بیان میں کمیشن سے درخواست کی کہ وہ چار فروری سے آٹھ مارچ کے درمیان پانچ ریاستوں میں ہونے والے اسمبلی انتخابات کو منصفانہ طریقے سے کرانے کے لئے مرکزی حکومت سے کہے کہ وہ پہلے سے مقرر تاریخ یعنی ایک فروری کو عام بجٹ پیش نہ کرے، کیونکہ انتخابات کے دوران عام بجٹ پیش کر کے ووٹروں کو متاثر کیا جا سکتا ہے۔

وہیں ایس پی ممبر پارلیمنٹ نریش اگروال نے کہا کہ ہم لوگوں نے بھی اس کی مخالفت کی ہے۔ ہم صدر سے ملاقات کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ بجٹ میں ووٹروں کو متاثر کرنے کے لئے اعلانات کئے جا سکتے ہیں۔ وہیں کانگریس لیڈر سندیپ دکشت نے کہا کہ پہلے بھی ایسا ہوا تھا۔ بجٹ الیکشن کو متاثر کرے گا۔

وہیں بی جے پی کی اتحادی شیو سینا نے بھی الیکشن سے پہلے بجٹ پیش کرنے کی مخالفت کی ہے۔ شیوسینا نے کہا کہ بجٹ روکنا چاہئے۔ پانچ ریاستوں میں انتخابات ملک کی سیاست کا مستقبل طے کریں گے۔ انتخابات سے پہلے بجٹ پیش کرنا لوگوں کو متاثر کر سکتا ہے۔ تمام سیاسی جماعتوں کو فیصلہ لینا چاہئے۔ حکومت کو سوچنا چاہئے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز