اگلے سال ختم ہوجائے گی رسوئی گیس سبسڈی، اپوزیشن نے بتایا عوام مخالف ، 18 کروڑ بی پی ایل خاندان ہوں گے متاثر

Aug 04, 2017 04:23 PM IST | Updated on: Aug 04, 2017 04:23 PM IST

نئی دہلی: رسوئی گیس پر سبسڈی مکمل طور پرختم کئے جانے کے حکومت کے فیصلے کو عوام مخالف بتاتے ہوئے لوک سبھا میں آج متعدد اپوزیشن ارکان نے اس پر اپنی ناراضگی ظاہر کی اور اسے واپس لینے کا مطالبہ کیا۔ آندھرا پردیش کے وشاکھاپٹنم میں ایک قومی پٹرولیم انسٹی ٹیوٹ قائم کرنے کے لئے پٹرولیم کے وزیر دھرمیندر پردھان ایوان میں بحث کے لئے پیش کئے گئے 'انڈین پٹرولیم اینڈ اینرجی انسٹی ٹیوٹ بل 2017' پر بحث میں حصہ لیتے ہوئے کانگریس کے ادھیر رنجن چودھری نے کہا کہ ایسے وقت میں جب بین الاقوامی مارکیٹ میں خام تیل کی قیمتیں 112 ڈالر فی بیرل سے کم ہوکر 45-51ڈالر فی بیرل کے ارد گرد رکی ہوئی ہیں حکومت کی جانب سے گیس سبسڈی اگلے سال تک مکمل طور پر ختم کرنے کا فیصلہ انتہائی افسوسناک ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس فیصلے سے تقریبا سوا كروڑ بی پی ایل خاندان براہ راست متاثر ہوں گے۔ انہوں نے پٹرولیم کے وزیر مملکت سے جاننا چاہا کہ آخر حکومت نے کس بنیاد پر یہ فیصلہ لیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کیا حکومت نے اپنے آپ یہ اندازہ لگا لیا کہ آئندہ سال تک 18 کروڑ 11 لاکھ لوگ خط افلاس سے اوپر آ جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کو تو تیل کی قیمت میں کمی کا فائدہ عام لوگوں تک پہنچانا چاہیے تھا اس کے برعکس وہ سبسڈی ختم کرنے کا قدم اٹھا رہی ہے۔

اگلے سال ختم ہوجائے گی رسوئی گیس سبسڈی، اپوزیشن نے بتایا عوام مخالف ، 18 کروڑ بی پی ایل خاندان ہوں گے متاثر

مسٹر چودھری نے کہا کہ حکومت کے اس فیصلے سے اکیلے مغربی بنگال میں 1 کروڑ 44 لاکھ لوگ متاثر ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ ایک طرف تو حکومت اجول جیسا منصوبہ لانے کا دم بھرتی ہے تو دوسری طرف سبسڈی ختم کر کے ان کی زندگی میں مشکلات کھڑا کر رہی ہے۔ انہوں نے ملک میں پٹرولیم کے شعبے کے بہتر انتظام کے قابل نظام تیار کرنے کی درخواست کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کو یہ معلوم کرنا چاہیے کہ اگر ریلائنس جیسی پرائیویٹ سیکٹر کی پیٹرو کمپنیوں کی ریکوری اچھی ہو جاتی ہے تو پھر عوامی علاقے کی پیٹرو کمپنیوں کی ریکوری کم کیوں ہوتی ہے۔انہوں نے کہا کہ فی شخص ایندھن کی کھپت سب سے کم ہونے کے باوجود ہندوستان تیل درآمد کرنے کے معاملے میں دنیا میں تیسرے نمبر پر ہے۔ حکومت کو چاہئے کہ ملک کو ایندھن کے معاملے میں خود انحصار بنائے اور اس کے لئے ملک میں موجودشیل گیس کے بے شمار ذخائر کی شناخت کر کے ان کا استعمال کیا جائے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز