ملک میں پیدا ہو رہے ڈر اور خوف کے ماحول کے خلاف آواز اٹھائے اپوزیشن : شبنم ہاشمی

Jul 15, 2017 07:32 PM IST | Updated on: Jul 15, 2017 07:32 PM IST

نئی دہلی۔  سماجی اور انسانی حقوق کی معروف کارکن شبنم ہاشمی نے آج کہا کہ ملک میں پیدا ہو رہے ڈر اور خوف کے ماحول کے خلاف اپوزیشن پارٹیوں کو پارلیمنٹ کے آئندہ اجلاس میں آواز بلند کرنی چاہئے۔ محترمہ ہاشمی نے یہاں پریس کانفرنس میں کہا کہ ملک میں کئی طرح سے خوف کا ماحول پیدا کیا یا جا رہا ہے۔کبھی گائے کے گوشت کے نام پر تو کبھی کسی اور بہانے سے لوگوں کو ہراساں کیا جا رہا ہے۔ ایک غیر اعلانیہ ایجنڈا چل رہا ہے جس میں اختلاف رائے کو ختم کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے ایک فرضی پولیس اہلکار کی فون کالز کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ لوگوں كوآدھار کارڈ-پین کارڈ نہ ہونے کے نام پر تنگ کیا جا رہا ہے۔ انکاؤنٹر میں مار ڈالنےکی دھمکی دی جا رہی ہے۔

محترمہ ہاشمی نے کہا کہ ملک میں مختلف طرح سے خوف و ہراس کا ماحول پیدا کیا جا رہا ہے۔ یہ ہندستانی جمہوریت اور ثقافت کے لئے بڑا خطرہ ہے۔ اپوزیشن جماعتوں کو پارلیمنٹ کے آئندہ اجلاس میں اس کی مخالفت میں آوازبلند کرنی چاہئے۔ یہ جمہوریت بچانے کے لئے ضروری ہے۔ محترمہ ہاشمی نے کہا کہ کل خود کو پولیس سب انسپکٹر بتاتے ہوئے ایک شخص نے ایک آٹو ڈرائیور کو فون کرکے لاجپت نگر تھانے آنے کو کہا۔ اس کی اطلاع جب انہیں ملی تو انهوں نے اس فون نمبر پر بات کی۔ اس شخص نے فون پر دھمکی دی کہ جس کسی کے پاس آدھار کارڈ-پین کارڈ نہیں ہوگا، اسے انکاؤنٹر میں مار دیا جائے گا۔ بعد میں تھانے میں جانے پر اس نام کا کوئی سب انسپکٹر نہیں ملا۔

ملک میں پیدا ہو رہے ڈر اور خوف کے ماحول کے خلاف آواز اٹھائے اپوزیشن : شبنم ہاشمی

شبنم ہاشمی: فائل فوٹو

انہوں نے کہا کہ فرضی پولیس اہلکار کے فون کی جانچ کرانے کے لئے دہلی پولیس کمشنر کو خط لکھا گیا ہےاور اس کی کاپی مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ کو بھیجی ہے۔ خط میں انہوں نے پورے معاملے کی تحقیقات کا مطالبہ کرتے ہوئے فرضی پولیس اہلکار کے خلاف کارروائی کی بات کہی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز