پیرا ڈائز پیپر لیک کیس : مرکزی وزیر جینت سنہا نے کیا اپنا دفاع ، سات دن کے مون برت پر گئے آر کے سنہا

Nov 06, 2017 07:40 PM IST | Updated on: Nov 06, 2017 07:41 PM IST

نئی دہلی: پیراڈائز پیپر لیک میں کئی سیاستدانوں اور بالی ووڈ ستاروں سمیت 714 ہندوستانیوں کے نام سامنے آئے ہیں ۔ ان میں بی جے پی کے راجیہ سبھا رکن رویندر کشور سنہا اور مرکزی وزیر جینت سنہا کے نام بھی شامل ہیں۔ تاہم ایک طرف جہاں سول ایوی ایشن کے وزیر مملکت جینت سنہا نے امریکی کمپنی ڈی لائٹ ڈیزائن میں اپنی مدت کار اور اس سلسلے میں الیکشن کمیشن اور وزیر اعظم دفتر کے ساتھ معلومات کا اشتراک نہیں کرنے کے معاملے میں اپنا دفاع کیا ، تو وہیں دوسری طرف آر کے سنہا سات دن کے مون برت پر چلے گئے ہیں۔

مرکزی وزیر جینت سنہا کہا کہ جہاں ضروری تھا وہاں انہوں نے اپنے سلسلے میں پوری اطلاعات فراہم کردی ہے۔مسٹر سنہاستمبر 2009 سے دسمبر 2013 تک اومڈیار نیٹ ورک نام کی ایک کمپنی کے ہندوستان کے مینیجنگ ڈائریکٹر تھے۔ان کی مدت کارکے دوران اس کمپنی نے امریکی کمپنی ڈی لائٹ ڈیزائن میں سرمایہ کاری کی تھی اور اس میں مسٹر سنہا ڈی لائٹ ڈیزائن کے ڈائریکٹروں میں بھی شامل تھے۔اس دوران، ڈی لائٹ ڈیزائن نے اسی نام سے کیمین آئی لینڈواقع اپنی کمپنی کے ذریعہ نیدرلینڈ کے ایک سرمایہ کار سے 30لاکھ ڈالرکے قرض کو منظوری دی تھی ۔مسٹر سنہا نے دسمبر 2013 میں اومڈیان نیٹ ورک کے منیجنگ ڈائریکٹر کے عہدے سے استعفی دے دیا تھا، لیکن وہ ایک آزادڈائریکٹر کے طور پر نومبر 2014 تک اس کے ڈائرکٹروں میں شامل رہے۔ نومبر میں مرکزی کابینہ میں شامل کئے جانے پر انہوں نے آزاد ڈائریکٹر کے طور پربھی استعفی دے دیا۔

پیرا ڈائز پیپر لیک کیس : مرکزی وزیر جینت سنہا نے کیا اپنا دفاع ، سات دن کے مون برت پر گئے آر کے سنہا

ادھر پیر کو جب میڈیا اہلکار آر کے سنہا سے ان کا رد عمل جاننے کیلئے پہنچے تو انہوں نے ایک پیپر پر لکھ کر جواب دیا کہ وہ سات دنوں کے مون برت پر ہیں اور وہ ابھی کچھ نہیں بول سکتے ہیں ۔ انہوں نے لکھ کر بتایا کہ وہ سات دن کے بھاگوت یگیہ کیلئے مون برت پر ہیں ۔

خیال رہے کہ پنامہ پیپرس کا انکشاف کرنے والے جرمنی کے اخبار جی ٹائیچے سائیٹنگ نے اب پیراڈائز پیپرس کو لے کر حیران کن انکشافات کئے ہیں ۔ پیراڈائز پیپرس میں فرضی کمپنیوں اور فرموں سے وابستہ کل ایک سو چونتیس کروڑ دستاویز شامل ہیں ۔ ان میں مرکزی وزیر جینت سنہا اور معروف اداکار امیتابھ بچن سمیت سات سو چودہ ہندوستانیوں کے نام سامنے آئے ہیں ۔ انٹرنیشنل کانسورٹیم انویسٹی گیٹو جرنلسٹس آئی سی آئی نے چھیانوے میڈیا آرگنائزیشن کے ساتھ مل کر پیراڈائز پیپرس نام کے دستاویز کی جانچ کی ہے ۔ اس میں دنیا بھر میں طاقت وار لوگوں کا پیسہ بیرون ممالک بھیجنے والی فرموں اور فرضی کمپنیوں کے بارے میں بتایا گیا ہے ۔

خیال رہے کہ ایک معروف انگریزی روزنامہ میں شائع ہونے والی خبر میں مرکزی وزیر جینت سنہا پر الزام لگایا گیا ہے کہ 2014 میں لوک سبھا انتخابات کے دوران انہوں نے اپنے حلف نامے میں یہ بات پوشیدہ رکھی اور وزیراعظم کے دفتر کو بھی اس کی اطلاع نہیں دی۔ تاہم مسٹر سنہا نے آج صبح ایک کے بعد ایک ٹویٹ کرکے کہا کہ یہ تمام لین دین جائز تھے. ... ان تمام کے سلسلے میں متعلقہ ایجنسیوںکو ضروری فائلنگ کے ذریعہ انہیں مکمل معلومات دے دی گئی ہے۔اومڈیارنیٹ ورک چھوڑنے کے بعد، مجھے ڈی لائٹ بورڈ میںایک آزاد ڈائریکٹر کے طور پر رہنے کے لئے کہا گیا تھا۔ مرکزی کابینہ میں شامل ہونے کے فورا بعد، میں نے آزاد ڈائریکٹر کےعہدے سے استعفی دے دیا تھا۔ "مرکزی وزیر نے کہا کہ یہ تمام ٹرانزیکشنزڈی لائٹ کے لئے اومڈیار کے ایک نمائندے کے طور پر کیا گیا تھا، نہ کہ کسی ذاتی مقصد کے لئے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز