ریاستوں اور وزرائے اعلی کے تعاون سے ہی نئے ہندوستان کا خواب پورا ہو سکتا ہے : وزیر اعظم مودی

Apr 23, 2017 04:49 PM IST | Updated on: Apr 23, 2017 04:49 PM IST

نئی دہلی : وزیر اعظم نریندر مودی نے آج کہا کہ نئے ہندوستان کا خواب تمام ریاستوں اور وزرائے اعلی کے تعاون اور ملی جلی کوشش سے ہی پورا ہو سکتا ہے۔ مسٹر مودی نے نیتی آیوگ کی انتظامی کونسل کی تیسری میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے کہا، ’’ ایک وزیر اعلی کے طور پر میں اس سے بخوبی واقف ہوں کہ نئے ہندوستان کے خواب کو تمام ریاستوں اور وزرائے اعلی کی ملی جلی کوششوں سے ہی پورا کیا جا سکتا ہے۔’’ انہوں نے کہا کہ ٹیم انڈیا آج پھر ایک پلیٹ فارم پر آکر عالمی رجحان میں ہو رہی تبدیلی کے لئے ہندوستان کو تیار کرنے اور اس کے لئے اقدامات بتانے پر تبادلہ خیال کرےگي۔ آج کی یہ میٹنگ پالیسیوں اور ان کے عمل پر خیالات کا تبادلہ کرنے کا ایک موقع بھی ہے۔‘‘

انہوں نے کہا، ’’ یہ ہماری اجتماعی ذمہ داری ہے کہ ہم ہندوستان کو آزادی کی 75 ویں سالگرہ کے موقع پر سال 2022 میں کس طور پر دیکھنا چاہتے ہیں اور اس مقصد کو حاصل کرنے کے لئے کس طرح تیزی سے آگے بڑھا جا سکتا ہے۔‘‘انہوں نے چمپارن ستیہ گرہ کے صدی سال پر بابائے قوم مہاتما گاندھی کو یاد کرتے ہوئے کہا کہ نیتی آیوگ نے نئی توانائی سے ہندوستان کو بدلنے کے لئے اقدامات اٹھائے ہیں۔‘‘

ریاستوں اور وزرائے اعلی کے تعاون سے ہی نئے ہندوستان کا خواب پورا ہو سکتا ہے : وزیر اعظم مودی

وزیر اعظم نے حکومت، نجی شعبے اور سول سوسائٹی کےمل کر کام کرنے کی ضرورت بتاتے ہوئے کہا کہ نیتی آیوگ ایک تعاون کرنے والاوفاقی ادارہ ہے اور اس کی طاقت نظریہ ہے نہ کہ انتظامی یا مالی کنٹرول۔ انہوں نے کہا کہ بجٹ اور منصوبوں کی منظوری کے لئے وزرائے اعلی کو نیتی آیوگ کے پاس آنے کی ضرورت ہے۔ نیتی آیوگ صرف سرکاری اعداد و شمار پر ہی کام نہیں کرتا ہے بلکہ اس میں باہر کے ماہر، متعلقہ علاقے کے ماہر اور نوجوان پیشہ ور ہیں اور ریاست بھی پالیسیاں بنانے میں شرکت کر سکتی ہیں۔

انہوں نے ای این اے ایم کی مثال دیتے ہوئے کہا کہ اس آخری پالیسی میں ریاستوں نے اہم کردار ادا کیا ہے۔مسٹر مودی نے کہا کہ ریاستوں کے وزرائے اعلی کے ذیلی گروپوں نے مرکزکی اسپانسر شدہ اسکیموں، سوچھ بھارت، کوشل وکاس اور ڈیجیٹل ادائیگی جیسے موضوعات پر اہم تجاویز دی ہیں۔ وزرائے اعلی کے خیالات کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ایسا پہلی بار ہوا ہے کہ وزرائے اعلی سے مرکزکی اسپانسر شدہ اسکیموں کی فہرست اور شیئرنگ پیٹرن پر تجاویز مانگی گئی اور فنڈنگ ​​میں دقت کے باوجود سفارشات کو فوری تسلیم کیا گیا۔ وزیر اعظم نے کہا کہ سال 15-2014اور 17-2016کے دوران ریاستوں کے کل فنڈ الاٹمنٹ میں 40 فیصد کا اضافہ ہوا جبکہ مرکزی منصوبوں کے لئے فنڈ پہلے کے 40 فیصد سے کم ہو کر 25 فیصد پر آ گیا۔ انہوں نے ریاستوں سے سرمایہ خرچ اور انفراسٹرکچر تعمیر پر اخراجات بڑھانے پربھی زور دیا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز