الہ آباد ہائی کورٹ کے 150 سال : وزیر اعظم مودی نے کہا : ہماری حکومت نے 1200 قوانین کئے ختم

Apr 02, 2017 01:05 PM IST | Updated on: Apr 02, 2017 01:05 PM IST

الہ آباد : اترپردیش میں الہ آباد ہائی کورٹ کے قیام کے 150 سال پورے ہونے پر منعقدہ پروگرام میں وزیر اعظم مودی، یوپی کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ اور سپریم کورٹ کے چیف جسٹس جے ایس كھیهر سمیت کئی نامور شخصیات نے شرکت کی۔اس موقع پر وزیر اعظم مودی نے کہا کہ 'چیف جسٹس جے ایس كھیهر کی بات میں نے دل سے سنی ہے ۔ چیف جسٹس کے ہر لفظ میں درد جھلکتا ہے اور میں نے اسے محسوس بھی کیا ہے ۔

وزیر اعظم نے کہا کہ گاندھی جی نے آزادی کا جذبہ پیدا کیا۔ آزادی کی لڑائی میں بھی وکیلوں کا اہم کردار رہا۔ خاص طور پر الہ آباد ہائی کورٹ ان میں سے بہت وکیلوں کا مرکز رہا۔ قانون کا مقصد تمام لوگوں کی فلاح و بہبود ہے۔ ڈاکٹر سروپلی رادھا کرشنن کا ذکر کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ قانون ایسی چیز ہے جس میں لگاتار تبدیلی ہوتی رہنی چاہئے ۔وزیر اعظم نے کہا کہ قانون کے جنجال کو ختم کرنے میں مرکزی حکومت نے کئی اقدامات اٹھائے ہیں۔ 1200 قوانین کو ختم کر دیا گیا ہے۔ اب وقت آ گیا ہے کہ 2022 تک ملک کو بہتر بنانے کا عزم کریں اور اس سمت میں قدم بڑھائیں۔

الہ آباد ہائی کورٹ کے 150 سال : وزیر اعظم مودی نے کہا : ہماری حکومت نے 1200 قوانین کئے ختم

خیال رہے کہ چیف جسٹس کھیہر نے اپنی تقریر میں ججوں کی کمی اور زیر التوا مقدمات پر تشویش ظاہر کی تھی۔ انہوں نے کہا کہ اب وقت آ گیا ہے کہ عدالتوں میں ججوں کے خالی عہدوں کو پر کیا جائے، اس کے لئے عدالتوں کو پیپر لیس ہونا ہوگا۔ ہائی کورٹ سے کیس کی فائل سپریم کورٹ ٹیکنالوجی سے بھیجی جائے گی۔

اس موقع پر مرکزی وزیر قانون روی شنکر پرساد نے کہا کہ الہ آباد ہائی کورٹ کے کچھ فیصلے سنگ میل ثابت ہوئے ہیں۔ یہیں سے مدن موہن مالویہ جیسے عظیم وکیل نکلے۔ ساتھ ہی عدالت نے کئی نامور وکیل اور جج دئے۔ یہاں تک کہ رام مندر کیس میں بھی الہ آباد ہائی کورٹ نے اپنا فیصلہ سنایا۔

اترپردیش کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے کہا کہ جب جب جمہوریت پر بحران آیا، الہ آباد ہائی کورٹ نے پوری وفاداری کے ساتھ اس کو بچایا۔ عدالت نے کچھ ایسے فیصلے دئے، جس نے ہندوستانی معاشرے کو نئی سمت دی۔ ویسے سماج قانون سے چلتا ہے اور الہ آباد ہائی کورٹ نے کئی تاریخی فیصلے دیئے ہیں۔الہ آباد ہائی کورٹ کی تاریخ شاندار رہی ہے۔ ویسے بھی قانون سے بڑھ کر کوئی نہیں ہے۔ قانون سے ہی شکایتوں کا حل نکلتا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز