ہندوستان اور افغانستان دہشت گردی کو ختم کر کے اقتصادی تعاون بڑھائیں گے

نئی دہلی ۔ ہندستان اور افغانستان نے اپنی اسٹریٹجک شراکت داری کو اور مضبوط بنانے نیز دہشت گردی کو ختم کرکے اقتصادی اور ترقی سے متعلق تعاون کو بڑھانے کے بارے میں بات چیت کی تاکہ علاقائی امن و سلامتی اور استحکام قائم ہوسکے ۔

Oct 25, 2017 10:05 AM IST | Updated on: Oct 25, 2017 10:05 AM IST

نئی دہلی ۔ ہندستان اور افغانستان نے اپنی اسٹریٹجک شراکت داری کو اور مضبوط بنانے نیز دہشت گردی کو ختم کرکے اقتصادی اور ترقی سے متعلق تعاون کو بڑھانے کے بارے میں بات چیت کی تاکہ علاقائی امن و سلامتی اور استحکام قائم ہوسکے ۔ وزیر اعظم نریندر مودی اور افغانستان کے صدر محمد اشرف غنی کے مابین یہاں حیدرآباد ہاؤس میں ہوئی میٹنگ میں دونوں فریقوں نے اپنی اسٹریٹجک شراکت داری کے تئیں عزم کا اعادہ کیا اور حال ہی میں اعلی سطحی دوطرفہ تبادلہ کے نتائج کا جائزہ لیا ۔ مسٹر غنی مسٹر مودی کی دعوت پرکل نئی دہلی پہنچے ۔حیدرآباد ہاؤس میں میٹنگ سے قبل مسٹر غنی نے صدر جمہوریہ رام ناتھ کووند اور وزیر خارجہ سشماسوراج سے ملاقات کی ۔

گزشتہ تین برسوں میں یہ مسٹر غنی کا ہندستان کا چوتھا دورہ ہے اور دونوں رہنماؤں کے مابین 12ویں دوطرفہ میٹنگ تھی ۔ دونوں لیڈروں نے پہلے تنہائی میں اور پھر ظہرانہ کے دوران تفصیلی بات چیت کی ۔ اس سے قبل قومی سلامتی کےمشیر اجیت ڈوبھال 16اکتوبر کو کابل گئے تھے اور مسٹر غنی کو مسٹر مودی کی طرف سے دعوت نامہ پیش کیاتھا۔افغانستان کے سی ای او ڈاکٹر عبداللہ عبداللہ 27سے 29 ستمبر تک ہندستان کےدورے پر تھے ،جبکہ وزیر خارجہ صلاح الدین ربانی 10سے 11ستمبر کو نئی دہلی میں تھے ۔ ذرائع کےمطابق مسٹر ربانی کےدورے کے دوران 11ستمبر کو ہوئی اسٹریٹجک شراکت داری کونسل کی میٹنگ میں نئی ترقیاتی شراکت داری کا جائزہ پچھلے 16برسوں سے انتہائی کامیاب ترقیاتی تعاون پر ایک اہم قدم کے طورپر کیا گیا تھا۔

ہندوستان اور افغانستان دہشت گردی کو ختم کر کے اقتصادی تعاون بڑھائیں گے

وزیر اعظم نریندر مودی کی افغانستان کے صدر محمد اشرف غنی کے ساتھ نئی دہلی کے حیدرآباد ہاؤس میں میٹنگ: تصویر، پی آئی بی۔

ہندستان افغانستان کو صحت ،زراعت، پینے کے پانی کی سپلائی ،تعلیم ،قابل تجدید توانائی ،بنیادی ڈھانچہ کی ترقی ،ہنرمندی کے فروغ اور صلاحیت سازی کے شعبوں میں امداد دیکر ملک کی تعمیر نو ،اقتصادی ترقی اور موثر انتظامیہ میں تعاون دے رہا ہے ۔ میٹنگ میں افغانستان میں دہشت گردی سے لڑرہے افغان فوجیوں کی بہادری کو سراہا گیا۔ دفاع اور سلامتی کے شعبوں میں ہندستان کے تعاون اور حمایت کا مثبت جائزہ لیا گیا جن میں افغانستان کے ہزاروں سیکورٹی جوانوں کو تربیت دینا اور ضرورت پڑنے پر ہندستان کی طرف سے مزید امداد دینے پر رضامندی شامل ہے ۔

ہندستان کی قیادت نے افغانستان میں وہاں کے لوگوں کی قیادت اور کنٹرول والی سیاسی صلح کے عمل کے تئیں اپنی حمایت کا اعادہ کیا اور تشدد اور دہشت گردی کے خاتمہ پر زور دیا گیا اور کہا گیا کہ کسی بھی بامعنی پیش رفت اور دائمی امن کے لئے سرکاری حمایت والی دہشت گردوں کی پناہ گاہوں کا خاتمہ ضروری ہے ۔ دونوں فریق اس بات پر متفق ہوئے کہ علاقائی اور بین الاقوامی سطح پر حال میں پیدا ہوئے نظریاتی اتفاق کی وجہ سے افغانستان میں امن وسلامتی اور استحکام کے مواقع پیدا ہوئے ہیں۔ میٹنگ میں کنکٹیوٹی سے متعلق امور پر تفصیلی بات چیت ہوئی ۔ ہندوستان نے اٹاری میں اپنی انٹگریٹیڈ چیک پوسٹ کے قیام کے عزم کو دوہرایا۔دونوں فریق علاقائی اور بین الاقوامی اتحادیوں کے ساتھ ملکر کام کرنے کے لئے رضامندی ظاہر کی اور افغانستان کو مستحکم ،پرامن ، ترقی پسند اور تکثیریت پسند ملک کی شکل میں ابھارنے کے مقصد سے مختلف بین الاقوامی پلیٹ فارموں پر صلاح ومشورہ اور تعاون کو بڑھانے پر متفق ہوئے ہیں ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز