بینک سے لون لے کر اب بھاگ نہیں سکیں گے ڈیفالٹر، ریزرو بینک آف انڈیا ملا کو کارروائی کا اختیار

May 05, 2017 01:01 PM IST | Updated on: May 05, 2017 01:01 PM IST

نئی دہلی : صدر جمہوریہ پرنب مکھرجی نے جمعہ کو نان پرفارمنگ اسیٹس(این پی اے) آرڈیننس کی منظوری دے دی ہے۔ اس کے ساتھ ہی بینکنگ ریگولیشن ایکٹ میں تبدیلی کو بھی منظوری مل گئی ہے۔ رپورٹ کے مطابق بینکنگ ریگولیشن ایکٹ کے سیکشن 35 میں دو نئی شق شامل کی گئی ہیں۔

اس کے تحت ریزرو بینک آف انڈیا (آر بی آئی) کو اختیار دیا گیا ہے کہ وہ بینکوں کے ڈیفالٹرس کے خلاف انسالوینسي اینڈ بینک کرپسی کوڈ کے تحت کارروائی کریں۔ وہیں دوسری شق میں آر بی آئی کو اختیار دیا گیا ہے کہ فیصلہ کے وقت کی حد میں این پی اے سے نمٹنے کے لئے بینکوں کو ضروری ہدایات جاری کرے۔

بینک سے لون لے کر اب بھاگ نہیں سکیں گے ڈیفالٹر، ریزرو بینک آف انڈیا ملا کو کارروائی کا اختیار

کابینہ نے بینکنگ ریگولیشن ایکٹ میں ترمیم کے آرڈیننس کو نافذ کرنے کی منظوری دے دی تھی۔ اس کے بعد فائنانس سکریٹری اشوک لواسا نے جمعرات کو کہا تھا کہ ایکٹ میں یہ ترمیم بیڈ لون کی پریشانی کو دور کرنے میں مددگار ہو گی۔ انہوں نے کہا تھا کہ میرے لئے اب یہ بتا پانا مشکل ہے کہ اس سے این پی اے کتنا نیچے جائے گا، لیکن ہمیں ایسا لگتا ہے کہ اس سے بیڈ لون کے مسئلہ کو حل کرنے میں ہمیں مدد ملے گی۔

آر بی آئی کے سابق ڈپٹي گورنر ایچ آر خان نے سی این بی سی ٹی وی 18 سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ مرکزی بینک کے لیے این پی اے کی تجویز کے مطابق ایک پروسیس میں شامل کرنا چاہئے، لیکن وہ آر بی آئی کی براہ راست مداخلت سے زیادہ خوش نہیں ہوں گے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز