پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے صدر جمہوریہ کے خطاب کے ساتھ بجٹ سیشن کا آغاز

نئی دہلی۔ پارلیمنٹ میں بجٹ سیشن کا آغاز آج صدر پرنب مکھرجی کے خطاب کے ساتھ ہوا۔

Jan 31, 2017 11:41 AM IST | Updated on: Jan 31, 2017 01:12 PM IST

نئی دہلی۔  صدر جمہوریہ پرنب مکھرجی کے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کرنے کے ساتھ  ہی آج پارلیمنٹ کا بجٹ اجلاس شروع ہو گیا۔ نائب صدر جمہوریہ اور راجیہ سبھا کے چیئرمین حامد انصاری، وزیر اعظم نریندر مودی، لوک سبھا اسپیکر سمترا مہاجن اور پارلیمانی امور کے وزیر اننت کمار  پرنب مکھرجی کو پارلیمنٹ کے اشوکا ہال تک لائے۔  پرنب مکھرجی نے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے بجٹ سیشن کو تاریخی قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ آزاد ہندوستان میں پہلی بار ریل بجٹ الگ سے نہیں لایا جائے گا۔ حکومت نے اس سال سے ریل بجٹ کو بھی عام بجٹ کا حصہ بنا دیا ہے، پہلے ریل بجٹ الگ سے پیش کیا جاتا تھا۔ انہوں نے حکومت کی کامیابیوں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ یہ سب کا ساتھ سب کا وکاس کی راہ پر آگے بڑھ رہی ہے۔ انہوں نے غریبوں کو صاف ایندھن کے طور پر رسوئی گیس دستیاب کرانے، سوچھ بھارت ابھیان ، جن دھن اکاؤنٹ کھلوانے کے کاموں کا ذکر کرتے ہوئے غیر نقدی معیشت (کیش لیس پروگرام) کے آغاز کا بھی ذکر کیا۔ صدر جمہوریہ نے کہا کہ حکومت لوگوں کو صحت کی سہولیات اور پینے کا صاف پانی فراہم کرنے کے ساتھ ساتھ غریبوں کو رہائش فراہم کرنے پر بھی زور دے رہی ہے۔

سینٹرل ہال میں وزیر اعظم کے ساتھ وزیر خزانہ اور راجیہ سبھا میں ایوان کے لیڈر ارون جیٹلی اور راجیہ سبھا میں اپوزیشن کے لیڈر غلام نبی آزاد بیٹھے ہوئے تھے۔ کانگریس صدر سونیا گاندھی، سماج وادی پارٹی کے لیڈر ملائم سنگھ یادو اور مودی کابینہ کے ارکان بھی مستعدی سے موجود نظر آئے۔

پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے صدر جمہوریہ کے خطاب کے ساتھ بجٹ سیشن کا آغاز

کسانوں پر حکومت کی خاص توجہ: پرنب

صدر پرنب مکھرجی نے کہا کہ حکومت ملک کے کسانوں کی اقتصادی صورت حال کو مزید مضبوط بنانے پر خصوصی توجہ دے رہی ہے اور کاشتکاری کو فروغ دینے کے لئے کئی منصوبے شروع کئے گئے ہیں۔ مکھرجی نے آج یہاں پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں کے مشترکہ اجلاس میں اپنے خطاب میں کہا کہ 2016 میں مانسون اچھا رہنے سے خریف فصل کی پیداوار میں اضافہ ہوا۔ ربیع کی بوائی بھی گزشتہ برس کے مقابلے میں چھ فیصد زیادہ زمین پر کی گئی ہے۔ حکومت کسانوں کو بوائی کیلئے کافی مقدار میں مناسب قیمت پر بیج اور کھاد فراہم کرانے کے ساتھ ہی ان کی پیداوار کی اچھی قیمت بھی دے رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے کسانوں کے لیے پردھان منتری فصل بیمہ یوجنا شروع کرنے کے ساتھ ہی انہیں سستا قرض دستیاب کرانے کے انتظامات کئے ہیں۔ کسان کریڈٹ کارڈ کو روپے کارڈ میں تبدیل کیا گیا ہے۔ گزشتہ دو برسوں کے دوران پردھان منتری کرشی سینچائی یوجنا کے تحت 12.07 لاکھ ہیکٹر زمین کو لایا گیا ہے۔

 مکھرجی نے کہا کہ دالوں کی قیمتوں کو روکنے کے لیے قدم اٹھائے گئے ۔ ملک میں دال کی پیداوار بڑھانے کی سمت میں کوشش کی گئی ۔ کسانوں کو دلہنوں کی مناسب قیمت دینے کے ساتھ ہی 20 لاکھ ٹن کا بفر اسٹاک بنایا گیا۔ کسانوں سے آٹھ لاکھ ٹن دال کی خریداری کی گئی۔

معذوروں کے لئے ملازمتوں میں ریزرویشن تین سے چار فیصد بڑھایا: پرنب

صدر پرنب مکھرجی نے آج کہا کہ حکومت نے معذوروں کے لئے سرکاری ملازمتوں میں ریزرویشن بڑھاکر تین سے چار فیصد کے ساتھ ہی پہلی بار گونگے ۔بہروں کے لئے مشترکہ علامتی زبان تیار کر رہی ہے۔ مکھرجی نے آج یہاں پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں کے مشترکہ اجلاس میں اپنے خطاب میں کہا کہ حکومت نے عوامی مقامات پر معذوروں کی رسائی فہم بنانے کے لئے "سگم بھارت ابھیان" شروع کیاہے۔ مختلف قسم کی ذہنی بیماریوں سے متاثر افراد کے لئے ہیلتھ انشورنس ایک لاکھ روپے کر دیا گیا ہے۔ صدر نے کہا کہ حکومت نے خواتین کو بااختیار بنانے کے لئے کئی کوششیں کی ہیں اور اسی سلسلہ کو آگے بڑھاتے ہوئے اس نے بیٹی بچاو، بیٹی پڑھاو جیسے کئی فلاحی منصوبے شروع کئے ہیں۔ صدر پرنب مکھرجی نے  کہا کہ ملک میں خواتین کو یکساں مواقع حاصل کرنے کا حق ہے۔ اگر خواتین مکمل طور پر بااختیار ہوں اور ان کی صلاحیت اور ہنر مندی کا مناسب استعمال کیا جائے تو ملک کو بہت کچھ حاصل ہو سکتا ہے۔ ریو اولمپکس میں پی وی سندھو، ساکشی ملک، دیپا کرماکر اور کئی دیگر کھلاڑیوں نے ملک کا وقار بڑھایا ہے۔ ان کی کارکردگی پر ملک کو فخر ہے اور یہ خواتین کی کامیابی کی علامت ہے۔

مکھرجی نے کہا کہ پہلی بار تین خواتین جنگی طیارے کی پائلٹ بنی ہیں، جن پر ملک کو فخر ہے۔ انہوں نے بچیوں کی فلاح و بہبود کے لئے شروع کی گئی حکومت کی اسکیموں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ بیٹی بچاؤ بیٹی پڑھاو اسکیموں کے اچھے نتائج حاصل ہوئے ہیں۔ حکومت نے لڑکیوں کے لئے محفوظ مستقبل کو یقینی بنانے کے نقطہ نظر سے "سکنیا سمردھی" اسکیم شروع کی ہے، جس میں ایک کروڑ سے بھی زیادہ اکاؤنٹ کھولے گئے اور 11 ہزار کروڑ روپے سے بھی زیادہ رقم جمع ہوئی۔ انہوں نے کہا کہ خواتین کے لئے محفوظ زچگی مہم بھی چلائی گئی ہے جس میں حاملہ خواتین کو طبی سہولیات فراہم کی جائیں گی اور زچگی سہولت ایکٹ میں ترمیم اور زچگی کی چھٹی کی مدت کو 12 ہفتے سے 26 ہفتوں تک بڑھائے جانے سے حاملہ خواتین کو کام کی جگہ پر مدد ملے گی۔ ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز