حرم مکی میں سازش کرنے والوں کی سرکوبی ضروری: پروفیسراخترالواسع

Jun 27, 2017 06:39 PM IST | Updated on: Jun 27, 2017 06:39 PM IST

نئی دہلی۔ کچھ طاقتیں ہیں جنہیں نہ حرمین کے تقدس کی پرواہ ہے اورنہ انسانی جانوں کے ضیاع کی۔ دہشت کے یہ سوداگر اپنے مفادات کے حصول کے لیے کسی بھی حد تک جاسکتے ہیں ۔ان خیالات کا اظہار مولانا آزادیونیورسٹی جودھپورکے وائس چانسلر پدم شری پروفیسراخترالواسع نے یہاں ایک پریس ریلیز میں کیا۔ جامعہ ملیہ اسلامیہ نئی دہلی کے شعبہ اسلامک اسٹڈیز کے سابق سربراہ پروفیسر اخترالواسع نے حرم مکی پرحملہ کرنے کی سازش میں شریک سبھی عناصر کی شدیدمذمت کی اورسرکوبی کی ضرورت کا اظہارکیا اورکہا ہے کہ اس شرمناک سازش سے پوری دنیا کے مسلمانوں کو شدید تکلیف پہنچی ہے اوراس سنگین واقعہ کے بعد پوری دنیا کے مسلم حکمرانو ں کو چاہیے کہ وہ سعودی حکومت کو ایسے عناصر کی سرکوبی کے لیے ہرممکنہ تعاون کریں ۔

انہوں نے کہا کہ حرمین شریفین کے تحفظ کے لیے تمام مسلم ممالک کو سعودی حکومت کی حمایت میں متحد ہوناچاہیے۔انہو ں نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ جس طرح سعودی سیکورٹی ایجنسیوں نے اس خونیں سازش کا بروقت پردہ فاش کیا اوراسے ناکام کردیا اس کے لیے وہاں کی سیکورٹی ایجنسیاں اورحکمراں قابل مبارکباد ہیں ۔ پروفیسر واسع نے ا س موقع پر سعودی حکومت،وہاں کی جملہ سیکورٹی ایجنسیوں کی اخلاقی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ سعودی حکمرانوں اوروہاں کی جملہ ایجنسیو ں کو زیادہ چاق وچوبند ہونے کی ضرورت ہے کیونکہ سازش بہت گہری ہے اوراس کے تار چاروں طرف پھیلے ہوئے معلوم ہوتے ہیں ۔

حرم مکی میں سازش کرنے والوں کی سرکوبی ضروری: پروفیسراخترالواسع

پروفیسر اختر الواسع: فائل فوٹو

حرم مکی پر حملے کی سازش کوناکام کرنے کے لیے انہوں نے شاہ سلمان اورنومنتخب ولی عہدکو مبارکباد دی ہے اور اپیل کی ہے کہ سعودی حکومت نے جس طرح حرمین کی پاسداری کا فریضہ ماضی میں ادا کیا ہے اسی طرح وہ اس کے لئے ماضی سے زیادہ الرٹ رہے ۔ انہوں نے کہا ہے کہ اس سازش کی تہوں تک پہنچنے کے لیے سرگرمی تیزکردینی چاہیے اوراس میں ملوث سبھی عناصر کو سخت سے سخت سزا دی جانی چاہیے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز