مرزا عبد القادر بیدل کی فارسی سے ایران اور ہندوستان میں صوفیانہ ثقافت کی روایات مستحکم

Feb 28, 2017 11:23 AM IST | Updated on: Feb 28, 2017 11:23 AM IST

علی گڑھ ۔ ادارۂ فارسی مطالعات کی ڈائریکٹر پروفیسر آذر می دخت صفوی نے صحافیوں سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مرزا عبد القادر بیدل کی شخصیت اور شاعری امتیازی اہمیت کی حامل ہے اور ان کے مطالعے سے اس عہد کی ادبی تاریخ کا پتہ چلتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بیدل نے فارسی شاعری اور نثر میں بڑا کام کیا ہے اور اس سے ایران کے ساتھ ہی ہندوستان اور مرکزی ایشیا میں صوفیانہ ثقافت کی روایات کو استحکام حاصل ہوا ہے۔ پروفیسر صفوی نے بتایا کہ ایران، تاجکستان، ازبیکستان، افغانستان، یمن، عراق اور دیگر مرکزی ایشیائی خطوں سے تقریباً 145 اور ہندوستان سے تقریباً 75مندوبین کی شرکت متوقع ہے۔

مرزا عبد القادر بیدل کی فارسی سے ایران اور ہندوستان میں صوفیانہ ثقافت کی روایات مستحکم

علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے ادارۂ فارسی مطالعات کے زیر اہتمام ایران کے مبین انسٹی ٹیوٹ، شیراز، این سی پی یو ایل اور نئی دلی میں واقع ایران کلچرل ہاؤس کے تعاون سے یکم مارچ سے 03؍مارچ تک اورینٹل اینڈ ایرانین اسٹڈیز کی دوسری بین الاقوامی کانفرنس اور بیدل دہلوی پر بین الاقوامی سیمینار کا انعقاد کیا جا رہا ہے۔ جس میں ایرانی پارلیمنٹ کے سابق اسپیکر ڈاکٹر غلام علی حداد عادل کانفرنس کا افتتاح کریں گے ۔ جھارکھنڈ کے سابق گورنر مسٹر سید سبطِ رضی مہمان خصوصی ہوں گے۔ نیشنل مائنارٹی کمیشن کے سابق چیئرمین مسٹر وجاہت حبیب اللہ کلیدی خطبہ پیش کریں گے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز