افرازالاسلام کے بے رحمانہ قتل کے خلاف دلی میں زبردست مظاہرہ

نئی دہلی۔ مغربی بنگال کے افرازالاسلام کے مبینہ بے رحمانہ قتل اور اس کے ویڈیو کووائرل کرنے کے خلاف آج یہاں مختلف طلبہ اور دیگر تنظیموں نے بیکانیر ہاؤس پر مظاہرہ کیا۔

Dec 09, 2017 06:58 PM IST | Updated on: Dec 09, 2017 06:58 PM IST

نئی دہلی۔ مغربی بنگال کے افرازالاسلام کے مبینہ بے رحمانہ قتل اور اس کے ویڈیو کووائرل کرنے کے خلاف آج یہاں مختلف طلبہ اور دیگر تنظیموں نے بیکانیر ہاؤس پر مظاہرہ کرکے لوجہاد، گؤ ہتیا اور دیگر ناموں سے قتل روکنے، نفرت کے ماحول کو ختم کرنے اور وسندھرا راجے حکومت کو برخاست کرنے کا مطالبہ کیا۔ مظاہرہ میں مقررین نے کہا کہ گزشتہ کئی مہینوں سے راجستھان میں پہلو خاں، جنید اور عمر خاں کا قتل کردیا گیا ہے مگر اس کے خلاف مناسب کارروائی نہیں کی گئی جس کی وجہ سے قاتلوں کے حوصلے بلند ہوگئے ہیں۔ انہوں نے الزام لگایا کہ جب سے مرکز میں بی جے پی کی حکومت آئی ہے بے گناہوں کا قتل آسان ہوگیا ہے اور قاتل بے خوف ہوکر نہ صرف قتل کر رہے ہیں بلکہ قتل کا ویڈیو بنا کر سوشل میڈیا پر ڈال بھی رہے ہیں۔

مقررین نے کہا کہ ایسا نہیں ہے کہ اس طرح کا قتل پہلی بار ہورہا ہے بلکہ اس سے پہلے بھی قتل ہوتے رہے ہیں لیکن قاتل اپنی شناخت پوشیدہ رکھتا تھا اور نشان نہیں چھوڑتا تھا لیکن اب کھلم کھلا اپنی شناخت ظاہر کر رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ سمجھ لینا کہ یہ قتل مسلمانوں کا ہورہا ہے بے وقوفی ہوگی بلکہ اس کا نشانہ ہر وہ انسان ہے جس کی منہ میں زبان ہے اور جو سنگھ پریوار کی مخالفت کرتا ہے۔

افرازالاسلام کے بے رحمانہ قتل کے خلاف دلی میں زبردست مظاہرہ

مقررین نے کہا کہ ایسا نہیں ہے کہ اس طرح کا قتل پہلی بار ہورہا ہے بلکہ اس سے پہلے بھی قتل ہوتے رہے ہیں لیکن قاتل اپنی شناخت پوشیدہ رکھتا تھا اور نشان نہیں چھوڑتا تھا لیکن اب کھلم کھلا اپنی شناخت ظاہر کر رہا ہے۔: فوٹو، ندیم خان کے فیس بک وال سے۔

جے این یو طلبہ لیڈر عمر خالد نے کہا کہ سنگھ پریوار کے نظریہ میں مسلمان تو دشمن ہیں ہی بلکہ وہ خواتین کا بھی احترام نہیں کرتے۔ ان کی نظر میں خواتین صرف ایک بچہ پیدا کرنے والی مشین ہیں اگر ایسا نہیں ہے تو ان کی شاخاؤں میں خواتین کیوں نہیں ہوتیں۔ انہوں نے کہا کہ افرازا لاسلام کا قتل صرف ایک قتل نہیں ہے بلکہ سماج کو دہشت زدہ کرنے کی ایک کوشش اور سماج کو قاتل بنانے کی ایک پہل ہے۔ یہ لوگوں کو سمجھنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ سماج میں نفرت پیدا کرنے سے صرف مسلمان ہی اس کا شکار نہیں ہوں گے بلکہ ایک دن اکثریتی دلت اور کمزور طبقہ بھی اس کا شکارہوگا۔ انہوں نے راجستھان حکومت اور خاص طور پر گلاب سنگھ کٹاریہ سے استعفی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ وہ امن و قانون کو نافذ کرنے میں ناکام رہے ہیں اور ان کے دور حکومت میں مجرموں کے دل سے قانون کا خوف ختم ہوگیا ہے۔

اے آئی ایس ایف کی لیڈر راحیلہ سنبل نے کہا کہ جمہوری ملک میں سب کو آزاد ی ہے کہ وہ کیا کھائے کیا پہنے، کس سے شادی کرے لیکن سنگھ پریوار نے ان تمام امور پر پہرہ بٹھا رکھا ہے۔فوٹو، ندیم خان کی فیس بک وال سے۔ اے آئی ایس ایف کی لیڈر راحیلہ سنبل نے کہا کہ جمہوری ملک میں سب کو آزاد ی ہے کہ وہ کیا کھائے کیا پہنے، کس سے شادی کرے لیکن سنگھ پریوار نے ان تمام امور پر پہرہ بٹھا رکھا ہے۔فوٹو، ندیم خان کی فیس بک وال سے۔

اے آئی ایس ایف کی لیڈر راحیلہ سنبل نے کہا کہ جمہوری ملک میں سب کو آزاد ی ہے کہ وہ کیا کھائے کیا پہنے، کس سے شادی کرے لیکن سنگھ پریوار نے ان تمام امور پر پہرہ بٹھا رکھا ہے۔ ان کی نظر میں لڑکیاں غلام ہیں جو ان کی مرضی پوچھ کر اپنا کام کریں گی۔ انہوں نے کہا کہ وہ اس لئے کامیاب ہے کیوں کہ وہ ہمارے درمیان تفرقہ ڈال کر اپنا کام کررہے ہیں اگر ہم ان کی چال کو سمجھیں اوران کے نظریہ کو جانیں تو سب کو یہ بات سمجھ میں آجائے گی کہ وہ ہندوؤں کا بھی بہی خواہ نہیں ہے۔ طلبہ لیڈر شریہ نے کہا کہ ملک میں جس طرح نفرت کا ماحول پیدا کیا جارہا ہے اور سماج کو بانٹا جارہا ہے یہ ملک کے لئے اچھا نہیں ہے اور اس سے نہ صرف افراتفری پھیلے گی بلکہ سماج مختلف خانوں میں بٹ کر امن و قانون کا مسئلہ پیدا کردے گا۔ مظاہرہ کرنے والی تنظیموں میں نیشنل موومنٹ فرنٹ، اے آئی ایس ایف، ایس ایف آئی، اے آئی سی سی ٹی یو، کے وائی ایس، پچھاس، ڈی ایس یو اور دیگر تنظیمیں شامل تھیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز