راہل اور میں ترقی، خوشحالی کے پہیے ہیں، مل کر ریاست کو آگے بڑھائیں گے: اکھلیش یادو

Jan 29, 2017 01:59 PM IST | Updated on: Jan 29, 2017 02:51 PM IST

لکھنئو۔ یوپی اسمبلی انتخابات کو لے کر گٹھ بندھن کرنے والی سماج وادی پارٹی اور کانگریس نے انتخابی مہم کا بگل بجا دیا ہے۔ اتوار کو لکھنؤ کے تاج ہوٹل میں منعقد مشترکہ پریس کانفرنس میں وزیر اعلی اکھلیش اور راہل گاندھی ایک ساتھ پہنچے۔ راہل نے کہا کہ مودی جی کے الفاظ میں یہ اتحاد ٹرپل پی یعنی پروگریس، پراسپیریٹی اور پیپلز ہے۔ وہیں اکھلیش یادو نے کہا کہ راہل اور میں ترقی، خوشحالی کے پہیے ہیں، مل کر ریاست کو آگے بڑھائیں گے۔

راہل گاندھی نے مشترکہ پریس کانفرنس کا آغاز کرتے ہوئے کہا کہ اتر پردیش میں پہلا لفظ اتر ہے۔ یہ اتحاد ایک جواب ہے۔ تاریخ میں یوپی نے دنیا کو جواب دیا ہے۔ 1857 میں کمپنی راج تھا، یوپی کو پروگریسو سوچ ملی اور کمپنی راج کا مل کر جواب دیا۔

راہل اور میں ترقی، خوشحالی کے پہیے ہیں، مل کر ریاست کو آگے بڑھائیں گے: اکھلیش یادو

ہم غصے کی سیاست، بانٹنے کی سیاست اور کمپنی کو ہندوستان کی دولت دینے کی سیاست کا جواب دے رہے ہیں۔ ایک طرح سے گنگا اور جمنا کا ملن ہو رہا ہے۔ راہل نے کہا کہ میرے اکھلیش کے ساتھ جو ذاتی تعلقات ہیں، وہ اب سیاسی طور پر بھی ہو گئے ہیں۔

اکھلیش یادو نے کہا کہ کانگریس پارٹی کے لیڈر راہل جی کا میں خیر مقدم کرتا ہوں۔ جہاں سے انہوں نے بات چھوڑی میں وہیں سے شروع کرتا ہوں۔ لوک سبھا میں ساتھ رہے۔ کئی بار ساتھ کام کرنے کا موقع ملا۔ ہم ایک دوسرے کو جانتے ہیں، بڑی بات یہ ہے کہ ہمیں اب ایک ساتھ کام کرنے کا موقع ملا ہے۔ آبادی کے لحاظ سے یوپی ایک بڑی ریاست ہے، ملک کو راہ دکھاتا ہے۔ میں اعتماد دلا سکتا ہوں کہ جس رفتار سے یوپی میں کام ہوا ہے، کانگریس کے آ جانے سے اور بھی تیزی سے کام ہوگا۔ کسی کو شک نہیں ہے کہ 300 سے زیادہ سیٹیں ہم جیتیں گے۔  ہم دونوں ترقی، خوشحالی کے پہیے ہیں، مل کر آگے بڑھائیں گے۔

انتخابات میں کم وقت ہے۔ پہلی بار ایسا ہے، جب یوپی میں لوگوں نے من میں حکومت بنا لی ہے۔ انہیں جواب ملے گا، جنہوں نے لوگوں کو لائن میں کھڑا کر دیا۔

اب لوگ لائن میں لگ کر نوٹ بندی کا جواب دیں گے۔

ستائیس  سال یوپی بے حال 'کے نعرہ پر سوال پوچھنے پر راہل گاندھی نے کہا کہ میں نے ایک پروگرام میں یہ بات کہی تھی کہ اکھلیش اچھا لڑکا ہے۔ اسے کام نہیں کرنے دیا جا رہا ہے۔  ہم نفرت اور غصے کی سیاست کو روکنا چاہتے ہیں اس لئے یہ اتحاد میں نے کیا ہے۔

اکھلیش اور میرا رشتہ ہے، دوستی ہے ، یہ ایک الگ بات ہے۔ ہم یوپی کے نوجوانوں کو نئی طریقے کی سیاست دینا چاہتے ہیں۔ ایس پی کانگریس میں کئی ایک طرح کی باتیں ہیں، اس پر ہم الیکشن لڑ رہے ہیں۔ دونوں جماعتوں کو اس پر آگے بڑھنا ہو گا۔

مہم کی حکمت عملی بتانے سے راہل گاندھی نے انکار کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہماری سوچ ہے کہ گنگا اور جمنا کی دھارا کو ایک ساتھ لایا جائے۔ سبھی یکساں نظریہ کے لوگ ایک ساتھ آئیں۔ لوگ بتائیں کہ اتر پردیش کے ڈی این اے میں غصہ نہیں ہے۔ اس اتحاد کو 2019 تک لے جانے کے سوال پر راہل نے کہا کہ ہمارا اتحاد یوپی میں فرقہ وارانہ طاقتوں کو روکنے کے لئے کیا گیا ہے۔ لوک سبھا انتخابات میں اتحاد ہوگا یا نہیں اس پر بحث کے راستے کھلے ہیں۔

کیرانہ معاملے میں بی جے پی کی طرف سے ٹاسک فورس بنانے کی بات پر اکھلیش نے کہا کہ ٹاسک فورس انہی کو پكڑے گی۔ بی جے پی کی طرف سے لگائے گئے الزام کہ بدعنوان اور جرم کرنے والے ایک ساتھ آئے ہیں کے سوال پر راہل نے کہا کہ بدعنوان تو وہ ہیں۔ پرینکا کی تشہیر میں آنے کے سوال پر راہل نے کہا کہ وہ میری بہن ہیں، مجھے مکمل تعاون کرتی ہیں۔ مہم میں آنے نہیں آنے کا فیصلہ وہ خود كریں گی۔ 1996 میں نرسمہا راؤ نے بی ایس پی کے ساتھ معاہدہ کیا تھا، 21 سال بعد کانگریس سماجوادی پارٹی کے ساتھ اتحاد کر رہی ہے۔ اس پر راہل گاندھی نے کہا کہ تاریخ بدلتی رہتی ہے۔ یہ کہنا کہ اس وقت اتحاد غلط تھا تو اس وقت بھی اتحاد غلط ہے، یہ کہنا ٹھیک نہیں ہے۔ اس وقت اتحاد لگتا تھا، اس وقت ٹھیک ہے۔ ملک کے لئے، کانگریس کے لئے اور ایس پی کے لئے بھی۔

راہل نے کہا کہ رائے بریلی، امیٹھی کی سیٹوں پر کانگریس کتنی سیٹوں پر لڑے گی یہ مرکزی مدعا نہیں ہے۔ مرکزی مدعا یہ ہے کہ بی جے پی کی جھوٹ کی سیاست، نوٹ بندی کی سیاست کو ختم کرنا ہے۔

 

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز