راہل گاندھی کی مدد سے ہی میرا بیٹا پائلٹ بن سکا : نربھیا کی والدہ

Nov 02, 2017 04:43 PM IST | Updated on: Nov 02, 2017 04:55 PM IST

نئی دہلی : دہلی میں 2012 میں ہوئے نربھیا اجتماعی آبروریزی کیس کی یادیں آج بھی تازہ ہیں ۔ اس کیس نے ملک کے لوگوں کو جھنجھور کر رکھ دیا تھا ۔ اقوام متحدہ میں بھی اس کیس پر بحث ہوئی تھی ۔ اس برے وقت میں اہل خانہ کی مدد کیلئے نربھیا کی والدہ نے کانگریس کے نائب صدر راہل گاندھی کا شکریہ ادا کیا ہے۔

ایک انگریزی اخبار کو دئے گئے انٹرویو میں نربھیا کی والدہ نے بتایا کہ نربھیا کے جانے کے بعد ہم سب ٹوٹ گئے تھے ، سب کچھ بکھر گیا تھا ، کئی لوگوں نے ہماری مدد کی ، کانگریس کے نائب صدر راہل گاندھی نے بھی مدد کا ہاتھ آگے بڑھایا ، آج ان کی وجہ سے ہی سے میرا بیٹا پائیلٹ بن سکا ہے ۔

راہل گاندھی کی مدد سے ہی میرا بیٹا پائلٹ بن سکا : نربھیا کی والدہ

نربھیا کی والدہ نے بتایا کہ راہل گاندھی نے میرے بیٹے امن (بدلا ہوا نام) کے کالج کی پوری تعلیم کا خرچہ اٹھایا تھا ۔ راہل گاندھی وقتا فوقتا فون کرکے بیٹے کی حوصلہ افزائی بھی کرتے تھے ۔ انہو نے بتایا کہ اس کیس کے بعد ہم پر جیسے پہاڑ ٹوٹ پڑا تھا ، لگتا تھا کہ جیسے زندگی ختم ہوگئی ، لیکن امن اپنے ہدف سے بھٹکا نہیں اور اتنے مشکل حالات میں بھی اس نے خود پر قابو رکھا اور بارہویں کی تعلیم جاری رکھی۔

نربھیا کی والدہ کے مطابق جب راہل گاندھی کو معلوم ہوا کہ وہ فوج میں شامل ہونا چاہتا ہے تو راہل نے ہی اس کو مشورہ دیا کہ وہ اسکول ختم ہونے کے بعد پائلٹ کی ٹریننگ لے ۔ انہوں نے بتایا کہ 2013 میں سی بی ایس ای کا امتحاد دینے کے بعد امن نے رائے بریلی کی اندرا گاندھی فلائنگ اکیڈمی میں داخل لے لیا ، اس کے رہنے ، کھانے اور تعلیم کا پورا خرچ راہل گاندھی نے برداشت کیا ۔ اپنی 18 ماہ کی ٹریننگ کے دوران وہ لگاتار نربھیا کیس سے وابستہ اپ ڈیٹس حاصل کرتا رہا۔

نربھیا کی والدہ کے مطابق امن کی تعلیم پوری ہوگئی اور اب وہ گروگرام میں ٹریننگ لے رہا ہے ، جلد ہی امن طیارہ اڑانے لگے گا ۔ انہوں نے کہا کہ راہل کے علاوہ پرینکا گاندھی نے بھی کئی مرتبہ فون کرکے اہل خانہ کی کیفیت دریافت کی ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز