مسلم دانشوروں نے مسلمانوں کے مسائل سے کیا باخبر، اب کیا حکمت عملی اختیارکریں گے راہل گاندھی؟

کانگریس صدر راہل گاندھی نے آج اپنی رہائش گاہ پر مسلمانوں کے مسائل سے متعلق مسلم دانشوروں سے تبادلہ خیال کیا اور مسلمانوں کے مسائل کو اٹھانے کا وعدہ کیا۔

Jul 11, 2018 08:47 PM IST | Updated on: Jul 11, 2018 09:25 PM IST

نئی دہلی: کانگریس صدر راہل گاندھی نے آج اپنی رہائش گاہ 12 تغلق لین پر مسلمانوں کے مسائل سے متعلق تبادلہ خیال کیا۔ تقریباً پونے دو گھنٹے چلی اس میٹنگ میں مسلمانوں کے جنرل ایشوز پر بات ہوئی۔ ساتھ ہی قومی سطح کی سیاست پر بھی بات ہوئی، لیکن اب دیکھنا یہ ہوگا کہ راہل گاندھی آگے کیا حکمت عملی اختیار کرتے ہیں۔

اطلاعات کے مطابق میٹنگ میں علی گڑھ مسلم یونیورسٹی، جامعہ ملیہ اسلامیہ، اردو زبان، موب لنچنگ، مسلمانوں کے ریزرویشن اور نرم ہندوتوا پر بھی کھل کر بات چیت ہوئی۔ اس کے علاوہ گزشتہ اسمبلی انتخابات اور اس کے نتائج، 2019 لوک سبھا الیکشن پر بھی بات چیت کی گئی۔ میٹنگ میں مودی کے 4 سالہ دور اقتدار پر بھی بات ہوئی۔

مسلم دانشوروں نے مسلمانوں کے مسائل سے کیا باخبر، اب کیا حکمت عملی اختیارکریں گے راہل گاندھی؟

میٹنگ میں راہل گاندھی نے مسلم رہنماوں سے اس بات کا وعدہ کیا ہے کہ وہ مسلمانوں کے مسائل کو مضبوطی کے ساتھ اٹھائیں گے۔ اس میٹنگ میں راہل گاندھی کے علاوہ سابق وزیر قانون اور سینئر کانگریسی لیڈر سلمان خورشید، کانگریس اقلیتی سیل کے سربراہ ندیم جاوید کے علاوہ سپریم کورٹ کے سینئر وکیل اور اے ایم یو کے سابق طلبہ یونین صدر زیڈ کے فیضان، معروف دانشور الیاس ملک، راجا محمود آباد، رخشندہ جلیل، فرح نقوی، ابو صالح شریف، عمران حبیب، محمد ہارون کے علاوہ معروف عالم دین اور سلمان خورشید کے بے حد قریبی مولانا فضل الرحیم مجددی بھی شامل تھے۔

اطلاعات کے مطابق مولانا فضل الرحیم مجددی کے علاوہ کوئی دیگرعالم دین اس میٹنگ میں شامل نہیں تھا، اس سے سوال اٹھنا لازمی ہے کہ کیا راہل گاندھی ملی جماعتوں اور مسلم تنظیموں سے دوری بناکر ہی مسلمانوں کی ہمدردی حاصل کرنا چاہتے ہیں۔ کئی مسلم تنظیموں کے سربراہان سے رابطہ کرنے پرمعلوم ہوا کہ کسی بھی مسلم تنظیم کے ذمہ داران کو دعوت نہیں دی گئی تھی۔

میٹنگ میں شامل رہے سینئر ایڈوکیٹ زیڈ کے فیضان نے بتایا کہ کانگریس صدر راہل گاندھی کے ساتھ میٹنگ میں مسلمانوں کے مسائل اور قومی سطح کے مسائل پر بات کی گئی۔ مسلمانوں کے جو مسائل ہیں، اس سے انہیں باخبر کیا گیا۔ میٹنگ میں شریک تمام لوگوں نے اپنی ذمہ داری کو سمجھتے ہوئے مسلم مسائل پر کھل کر بات کی اور راہل گاندھی کی توجہ مبذول کرائی۔ جس کے بعد کانگریس صدر نے وعدہ کیا ہے کہ وہ ان مسائل کو جتناممکن ہوگا، ضرور اٹھائیں گے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز