بابا رام رحیم کیس : راجناتھ کی ہریانہ و پنجاب کے وزرائے اعلی سے گفتگو ، صورتحال کا جائزہ لیا

Aug 25, 2017 07:47 PM IST | Updated on: Aug 25, 2017 07:47 PM IST

نئی دہلی: مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے آج كرغستان دورے سے لوٹتے ہی ہریانہ اور پنجاب کے وزرائے اعلی سے بات کی اور ڈیرہ سچا سودا کے سربراہ گرمیت رام رحیم کو عصمت دری کے معاملے میں عدالت کی طرف سے قصوروار ٹھہرائے جانے کے بعد بھڑکے تشدد سے پیدا ہوئی صورحال کا جائزہ لیا۔ انہوں نے مرکز کی طرف سے ہر ممکن مدد کی دونوں وزرائے اعلی کو یقین دہانی کرائی۔ موصولہ اطلاع کے مطابق وزیر داخلہ دوپہر کو ہی كرغستان کے دو روزہ دورے سے واپس آئے اور ہوائی اڈے سے براہ راست نارتھ بلاک واقع اپنے دفتر جاکر ہریانہ کے وزیر اعلی منوہر کھٹر اور پنجاب کے وزیر اعلی کیپٹن امرندر سنگھ سے بات کی۔ انہوں نے دونوں ریاستوں میں امن و قانون کی صورتحال کا جائزہ لیا اور ان سے سنٹرل فورسز کی ضرورت کے بارے میں پوچھا اور مرکز کی جانب سے ہر ممکن مدد کی یقین دہانی کرائی۔

وزارت کے مطابق، مرکزی ایجنسیاں صورتحال پر نظر رکھے ہوئے ہیں ۔ رام رحیم پر فیصلہ آنے کے پیش نظر مرکز نے نیم فوجی دستوں کی 50 کمپنیاں پہلے ہی وہاں بھیج دی تھیں ۔ جیسے ہی عدالت نے فیصلہ سنایا، رام رحیم کے حامیوں نے پنچکولہ میں تشدد شروع کردیا۔ انہوں نے کئی جگہوں پر گاڑیوں اور ٹیلی ویژن چینلز کی او بی وین کو آگ لگا دی اور پولیس پر پتھراؤ کیا۔ بھیڑ کے قابو میں نہ آنے پر پنچکولہ میں آرمی کی چھ ٹکڑیاں تعینات کی گئی ہیں۔ ڈیرہ سچا سودا کے ہیڈ کوارٹر والے ضلع سرسا میں بھی فوج کو تیار رکھا گیا ہے۔

بابا رام رحیم کیس : راجناتھ کی ہریانہ و پنجاب کے وزرائے اعلی سے گفتگو ، صورتحال کا جائزہ لیا

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز