گجرات راجیہ سبھا انتخابات: کراس ووٹنگ پر کانگریس پہنچی الیکشن کمیشن

Aug 08, 2017 06:54 PM IST | Updated on: Aug 08, 2017 07:03 PM IST

نئی دہلی۔ گجرات میں راجیہ سبھا کی تین نشستوں کے لئے منگل کو ووٹنگ مکمل ہو گئی ہے۔ سونیا گاندھی کے سیاسی مشیر احمد پٹیل کی سیٹ پر کافی پینچ پھنسا ہوا ہے۔ ان کا مقابلہ بی جے پی امیدوار بلونت سنگھ سے ہے۔ کراس ووٹنگ کے چلتے نتائج آنے میں تاخیر ہو رہی ہے۔ دو ووٹ کو لے کر کانگریس۔ بی جے پی میں ٹھن گئی ہے۔ راگھوجی پٹیل کی ووٹنگ پر کانگریس نے اعتراض کیا ہے۔ پارٹی نے الیکشن کمیشن سے ووٹ منسوخ کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ راگھوجی پٹیل نے وہپ کے باوجود ووٹ کا انکشاف کیا۔ وہیں بی جے پی نے کانگریس کے ایک رکن اسمبلی کے ووٹ پر اعتراض کیا۔ اب اگر ووٹ منسوخ ہوئے تو پوری صورت حال بدل جائے گی۔

جے ڈی یو لیڈر کے سی تیاگی نے دعوی کیا کہ ان کی پارٹی کے ممبر اسمبلی چھوٹو بھائی وساوا نے بی جے پی کو ووٹ دیا ہے، جبکہ خود ممبر اسمبلی نے کہا کہ انہوں نے احمد پٹیل کو ووٹ دیا ہے۔ کانگریس نے اپنے دو باغی اراکین اسمبلی کے ووٹ منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ گجرات میں سرگرمی کے درمیان دہلی میں کانگریس لیڈر رنديپ سرجےوالا اور آر پی این سنگھ الیکشن کمیشن کے پاس پہنچ گئے ہیں۔

گجرات راجیہ سبھا انتخابات: کراس ووٹنگ پر کانگریس پہنچی الیکشن کمیشن

وقار کی اس لڑائی میں نہ صرف سونیا گاندھی کے سیاسی مشیر احمد پٹیل کا مستقبل طے ہوگا بلکہ بی جے پی صدر امت شاہ کے سیاسی اثر ورسوخ کا بھی پتہ چلے گا۔

بتا دیں کہ اسمبلی میں بی جے پی کے 121 رکن اسمبلی ہیں جبکہ پارٹی کو کانگریس کے کئی باغی ممبران اسمبلی کی حمایت ملی ہے۔ این سی پی نے بھی بی جے پی کو حمایت دی ہے۔ حالانکہ جے ڈی یو نے کانگریس کو اپنی حمایت دی ہے۔ ووٹنگ میں کل 176 اراکین اسمبلی نے حصہ لیا۔

کانگریس کے 8 ممبران اسمبلی نے کراس ووٹنگ کی ہے۔ اشوک گہلوت نے کہا، کراس ووٹنگ کرنے والے 8 ممبران اسمبلی کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔ اگرچہ انہوں نے یہ بھی دعوی کیا کہ ہر حال میں احمد پٹیل کی جیت ہوگی۔ کانگریس سے حال ہی میں الگ ہوئے شنکر سنگھ واگھیلا نے کہا کہ انہوں نے احمد پٹیل کو ووٹ نہیں دیا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز