رامجس کالج تنازعہ: راہل گاندھی نے گرمہرکور کی حمایت کی، طلبہ کا آج دہلی یونیورسٹی میں مارچ

Feb 28, 2017 11:05 AM IST | Updated on: Feb 28, 2017 01:06 PM IST

نئی دہلی۔  دہلی یونیورسٹی کے کیمپس اور رامجس کالج میں ہنگامہ کے بعد پیدا ہوا تنازعہ ختم ہوتا نظر نہیں آ رہا ہے اور عمر خالد کو مدعو کرنے پر رامجس کالج میں ہوئے تشدد اور طالبہ گرمہر کور کو آن لائن دھمکیاں دیئے جانے کے خلاف طلبا آج دہلی یونیورسٹی میں مارچ نکالیں گے۔ بی جے پی ۔آر ایس ایس سے منسلک طلبا تنظیم اے بی وی پی نے کل اپنے ’’قوم پرستانہ موقف‘‘ کی حمایت میں ترنگا مارچ نکالا تھا۔اے بی وی پی نے جواہر لعل نہرو یونیورسٹی کے متنازعہ طالب علم عمرخالد کو مدعو کرنے پر اعتراض کیا تھا۔

دریں اثنا، کارگل کے ایک شہید کی بیٹی گرمہر کور کو اہم سیاسی رہنماؤں کی حمایت ملی ہے۔ گرمہر کو ر کو قوم پرستی اور اظہار رائے کی آزادی کے تعلق سے ہونے والے مباحثہ پر پیدا ہوئے تنازعہ میں الجھا دیا گیا تھا۔ کانگریس کے نائب صدر راہل گاندھی نے ایک ٹوئیٹ میں کہا کہ ’’خوف اور جبر واستبداد کے خلاف ہم اپنے طلبا کے ساتھ ہیں۔‘‘ مسٹر گاندھی نے کل شام اپنے ٹوئیٹ میں کہا کہ ’’ غصہ ، نفرت اور عدم رواداری کے خلاف ہمیشہ ایک گرمہر کو ر کھڑی ملیگی۔‘‘ گرمہر کورنے الزام لگایا ہے کہ سوشل نیٹ ورکنگ سائٹ پر انکے خلاف تبصرے کے ساتھ ساتھ انھیں دھمکیاں بھی ملی ہیں ۔ انھوں نے سوشل نیٹ ورکنگ سائٹ پر اپنی پروفائل تصویر لگائی ہے جس پر تحریر ہے ’’پاکستان نے میرے والد کو نہیں مارا ، جنگ نے انھیں مارا ہے ‘‘، اس کی وجہ سے انھیں سخت ناراضگی کا سامنا کرنا پڑا ہے اور اس تنازعہ میں مرکزی وزیر بھی شامل ہوگئے ہیں۔

رامجس کالج تنازعہ: راہل گاندھی نے گرمہرکور کی حمایت کی، طلبہ کا آج دہلی یونیورسٹی میں مارچ

وزیر مملکت برائے امور داخلہ کرن ریجیجو نے کل ایک ٹوئیٹ میں سوال کیا کہ ’’ اس نو عمر لڑکی کے ذہن میں کون زہر گھول رہا ہے ۔‘‘ مسٹر ریجیجو نے یہ بھی کہا کہ ’’ حکومت پر نکتہ چینی کرو لیکن بھارت ماتا کو گالی مت  دو۔‘‘میسور سے بی جے پی رکن پارلیمان پرتاپ سمہا نے ٹوئیٹر پر انڈر ورلڈ ڈان داؤد ابراہیم کی ایک تصویر پوسٹ کرتے ہوئے کیپشن لگایا ہے ’’ 1993 میں میں نے لوگوں کو نہیں مارا ، بم نے انھیں مارا۔‘‘ کرکٹ اسٹار ویریندر سہواگ نے بھی گرمہر کور کے اس تبصرے پر نکتہ چینی کی ہے جس میں انھوں نے کہا ہے کہ 1999 میں کارگل تصادم کے دوران پاکستان نے نہیں، جنگ نے انکے والد کو مارا تھا۔

دریں اثنا مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے اتر پردیش میں کہا کہ وہ دہلی پولیس کے اہلکاروں کے رابطہ میں ہیں اور ان سے کہا ہے کہ حالات سے نمٹتے وقت صبرو تحمل سے کام لیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز