پارلیمانی کمیٹی کے تیکھے سوالات سے منموہن سنگھ نے ارجت پٹیل کو بچایا ، بن گئے ڈھال

Jan 18, 2017 07:35 PM IST | Updated on: Jan 18, 2017 10:33 PM IST

نئی دہلی : نوٹ بندی پر وزارت خزانہ سے متعلق پارلیمنٹ کی مستقل کمیٹی کی بدھ کو ہوئی میٹنگ کافی ہنگامہ خیز رہی ۔ سڑک سے لے کر پارلیمنٹ تک نوٹ بندی پر احتجاج کر رہے اپوزیشن ممبران پارلیمنٹ کے سوالات تھے ، تو جواب دینے والوں کے کٹہرے میں وزارت خزانہ کے افسران اور کمیٹی کے سامنے پیش ہوئے خود آر بی آئی کے گورنر ارجت پٹیل۔ ذرائع کے مطابق کانگریس لیڈر ویرپا موئلی کی صدارت والی کمیٹی کی میٹنگ میں ایک موقع ایسا بھی آیا ، جب کمیٹی کے رکن اور سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ آر بی آئی گورنر پٹیل کی ڈھال بن گئے۔

بتایا جاتا ہے کہ اجلاس کے دوران کانگریسی لیڈر دگ وجے سنگھ نے آر بی آئی گورنر سے پوچھا کہ کیا آپ کو لگتا ہے اپنے کے اکاؤنٹس سے رقم نکالنے کی حد ہٹا دی گئی ، تو ملک میں افراتفری تفری مچ جائے گی، پٹیل ان کے اس سوال کا جواب دیتے ، اس کے قبل ہی اجلاس میں موجود سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ نے کہا کہ آر بی آئی گورنر کو ایسے سوالات کا جواب دینے کی ضرورت نہیں ہے۔

پارلیمانی کمیٹی کے تیکھے سوالات سے منموہن سنگھ نے ارجت پٹیل کو بچایا ، بن گئے ڈھال

خیال رہے کہ منموہن سنگھ بھی ریزرو بینک کے گورنر رہ چکے ہیں۔ اتنا ہی نہیں بتایا جاتا ہے کہ منموہن سنگھ ارجت پٹیل کو کافی پسند بھی کرتے ہیں، منموہن کے ہی دور میں ارجت پٹیل کو آر بی آئی کا ڈپٹی گورنر بنایا گیا تھا۔ اس سے پہلے پٹیل منموہن سنگھ کے وزیر خزانہ کے دور میں مشیر بھی رہ چکے ہیں۔

ذرائع کے مطابق گورنر ارجت پٹیل نے مستقل کمیٹی کو اس بات کی معلومات نہیں دی کہ نوٹ بندی سے متاثر بینکنگ نظام کب تک معمول پر آ جائے گا، لیکن ذرائع کے مطابق انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ جتنی بھی رقم کی ضرورت ہو گی مرکزی بینک اس کو فراہم کرنے کے قابل ہے۔ آر بی آئی کے سربراہ نے کمیٹی کو بتایا کہ نئی کرنسی میں 9.2 لاکھ کروڑ روپے بینکنگ سسٹم میں ڈالے جا چکے ہیں ۔ ارجت پٹیل نے پارلیمانی کمیٹی کو یہ بھی بتایا کہ نوٹ بندی کا عمل گزشتہ سال جنوری سے ہی شروع ہو گیا تھا۔

خیال رہے کہ آر بی آئی گورنر کا یہ بیان کمیٹی کو پہلے دیے گئے اس تحریری بیان کے بالکل برعکس ہے ، جس میں انہوں نے کہا تھا کہ وزیر اعظم کی طرف سے 8 نومبر کو 500 اور 1000 روپے کے نوٹوں کو ہٹانے کے اعلان سے صرف ایک دن پہلے 7 نومبر کو حکومت نے آر بی آئی کو بڑے نوٹوں کو منسوخ کرنے کا 'مشورہ دیا تھا۔ تاہم پٹیل نے کمیٹی کو یہ نہیں بتایا کہ منسوخ نوٹوں میں سے کتنے بینکوں میں واپس آ چکے ہیں۔

ارجت پٹیل نے کانگریس کے لیڈر ویرپا موئلی کی قیادت والی مالی معاملات پر پارلیمنٹ کی مستقل کمیٹی کو بتایا کہ جنوری 2014 میں 1000 روپے کے نوٹوں کی ایک سیریز کو جزوی طور پر واپس لے لیا گیا تھا ۔ ذرائع نے بتایا کہ وزارت خزانہ کے افسران بھی کمیٹی کے سامنے پیش ہوئے، لیکن انہوں نے ارکان پارلیمنٹ کا اس سوال کا جواب نہیں دیا کہ نوٹ بندی کے بعد منسوخ نوٹوں میں سے کتنی رقم بینکوں میں جمع ہوچکی ہے۔

بتایا جارہا ہے کہ جمعہ کو ارجت پٹیل کے وی تھامس کی قیادت والی پبلک اکاؤنٹس کمیٹی (پی اے سی) کے سامنے بھی پیش ہو سکتے ہیں۔ تھامس نے کچھ دن پہلے بیان دیا تھا کہ اگر ضرورت ہوئی تو نوٹ بندی کے معاملہ پر صفائی دینے کے لے وزیر اعظم مودی کو بھی سمن جاری کیا جا سکتا ہے۔ اگرچہ اس بیان کے خلاف بی جے پی نے لوک سبھا اسپیکر سے شکایت کی تھی اور تھامس کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیاتھا۔

خیال رہے کہ اس بات کے لئے آر بی آئی تنقیدکی زد پر ہے ، نوٹ بندی کو لے کر اس نے پہلے سے وافر تیاریاں نہیں کی تھیں اور اس نے اپنی خود مختاری سے بھی سمجھوتہ کیاہے۔ تاہم ریزرو بینک نے اب تک یہ معلومات نہیں دی ہے کہ 15.44 لاکھ کروڑ روپے کے منسوخ نوٹوں میں سے کتنی رقم بینکوں میں واپس آچکی ہے ۔ تاہم کچھ اطلاعات کے مطابق پرانے نوٹوں کا تقریبا 97 فیصد حصہ بینکوں میں واپس آچکا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز