کشمیر: یوم جمہوریہ کی تقریبات میں ملازمین کی شرکت لازمی قرار، خلاف ورزی پر کارروائی کی وارننگ

Jan 20, 2017 01:36 PM IST | Updated on: Jan 20, 2017 01:36 PM IST

سری نگر: جموں وکشمیر حکومت نے اپنی دو دہائی پرانی روش برقرار رکھتے ہوئے یوم جمہوریہ کی سرکاری تقریبات میں اپنے ملازمین کی شمولیت کو ایک بار پھر لازمی قرار دے دیا ہے۔ حکومت نے اس حوالے سے جاری کردہ سرکیولرس میں خلاف ورزی کے مرتکب پائے جانے والے سرکاری ملازمین کو تادیبی کاروائی کا انتباہ کیا ہے۔ جموں وکشمیر کے حالات پر گہری نگاہ رکھنے والے مبصرین کا کہنا ہے کہ سرکاری ملازمین کی یوم آزادی اور یوم جمہوریہ کی تقریبات میں شمولیت کو اس لئے لازمی قرار دیا جاتا ہے کیونکہ ریاست بالخصوص وادی کشمیر میں عام شہری ایسی تقریبات کا کلی طور پر بائیکاٹ کرتے ہیں۔

مبصرین کا مزید کہنا ہے ’یہاں تک کہ مین اسٹریم سیاسی جماعتوں کے لیڈروں کو بھی ایسی تقریبات میں اپنے کارکنوں کو شمولیت کے لئے قائل کرنے میں خاصی تگ و دو کرنی پڑتی ہے‘۔ رپورٹوں کے مطابق ریاستی حکومت کے جنرل ایڈمنسٹریشن ڈیپارٹمنٹ جس کا کام کاج خود ریاستی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی دیکھتی ہیں، نے سرکیولر نمبر 03 جی اے ڈی آف 2017 مورخہ 10 جنوری میں وادی کے ضلع ترقیاتی کمشنروں سے کہا ہے کہ وہ 26 جنوری کی تقریبات میں سرکاری ملازمین کی شرکت کو یقینی بنائیں۔

کشمیر: یوم جمہوریہ کی تقریبات میں ملازمین کی شرکت لازمی قرار، خلاف ورزی پر کارروائی کی وارننگ

اس سرکیولر پر عمل درآمد کرتے ہوئے وسطی ضلع بڈگام کے ضلع ترقیاتی کمشنر نے ایک حکم نامہ جاری کرکے تمام ضلع و سیکٹر افسروں سے کہا ہے کہ وہ اپنے پورے ماتحت عملے کے ساتھ اپنے متعلقہ علاقوں میں ہونے والی یوم جمہوریہ کی تقریبات میں شمولیت کو یقینی بنائیں۔ ڈپٹی کمشنر بڈگام کی جانب سے جاری کردہ حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ 26 جنوری کو کوئی تعطیل نہیں ہے اور اس دن کوئی سرکاری ملازم چھٹی نہیں لے سکتا ہے۔ حکم نامے میں کہا گیا ہے ’26 جنوری کو کوئی تعطیل نہیں ہے۔ ڈیوٹی کے حصے کے طور پر سرکاری ملازم کو یوم جمہوریہ کی تقریب میں شرکت کرنی ہے۔ ہر ایک ملازم کو اپنی شرکت یقینی بنانی ہوگی اور اس دن کے لئے کوئی چھٹی منظور نہیں کی جائے گی‘۔

ضلع ترقیاتی کمشنر نے اس حکم نامے کی خلاف ورزی کرنے والے سرکاری ملازمین کو تادیبی کاروائی کا انتباہ بھی کیا ہے۔ حکم نامے میں کہا گیا ہے ’تمام ضلع اور علاقائی افسروں سے کہا جاتا ہے کہ وہ اپنے پورے ماتحت عملے کے ہمراہ یوم جمہوریہ کی ہونے والی تقریب میں شمولیت کو یقینی بنائیں‘۔

ذرائع نے بتایا کہ جنرل ایڈمنسٹریشن ڈیپارٹمنٹ کے سرکیولر پر عمل درآمد کے طور پر وادی کے سبھی دس اضلاع کے ضلع ترقیاتی کمشنروں نے اپنے ماتحت افسروں کے نام ایسے ہی حکم نامے جاری کئے ہیں جن میں انہیں یوم جمہوریہ کی تقریبات میں اپنے ماتحت سرکاری ملازمین کی شرکت کو یقینی بنانے کے لئے کہا گیا ہے۔ رپورٹوں کے مطابق ریاستی حکومت کے ایڈیشنل سکریٹری نے گذشتہ ہفتہ ریاست کی سرمائی دارالحکومت جموں میں جاری ایک سرکیولر میں سرکاری ملازمین کو انتباہ کیا کہ جموں میں ہونے والی یوم جمہوریہ کی تقریب میں شرکت نہ کرنے والے ملازمین کو تادیبی کاروائی کا سامنا کرنا پڑے گا۔

ایڈیشنل سکریٹری نے جاری کردہ سرکیولر میں کہا ہے ’جموں میں تعینات تمام ریاستی سرکار اور عوامی سیکٹر کے اداروں کے افسروں و اہلکاروں سے کہا جاتا ہے کہ وہ ڈیوٹی کے حصے کے طور پر مولانا آزاد اسٹیڈیم جموں میں ہونے والی یوم جمہوریہ کی تقریب میں اپنی شرکت کو یقینی بنائیں‘۔ سرکیولر میں مزید کہا گیا ہے ’تقریب میں غیر حاضری کو ڈیوٹی میں کوتاہی اور حکومتی ہدایت کی نافرمانی تصور کیا جائے گا۔ تقریب سے غیر حاضر رہنے والوں کے خلاف تادیبی کاروائی شروع کی جائے گی‘۔

مبصرین نے بتایاکہ ریاستی حکومت کے یوم جمہوریہ کی تقریبات کے حوالے سے سرکاری ملازمین کے لئے احکامات کوئی نئی بات نہیں ہے اور یہ روش وادی میں نوے کی دہائی میں مسلح شورش کے آغاز سے ہی جاری ہے۔ انہوں نے بتایا ’کشمیری عوام کی ایسی تقریبات میں عدم دلچسپی کے باعث حکومت کو ایسے موقعوں پر بھیڑ اکھٹا کرنے کے لئے سرکاری ملازمین اور اسکولی بچوں پر ہی اکتفا کرنا پڑتا ہے‘۔ ریاست میں یوم جمہوریہ کی تقریبات کے حوالے سے سب سے بڑی تقریب جموں کے مولانا آزاد اسٹیڈیم میں منعقد ہوگی جہاں ریاستی گورنر این این ووہرا پرچم کشائی کی رسم انجام دیں گے۔

کشمیری علیحدگی پسند قیادت سید علی گیلانی، میرواعظ مولوی عمر فاروق اور محمد یاسین ملک نے یوم جمہوریہ کے موقع پر مکمل ہڑتال کی کال دے دی ہے۔انہوں نے اپنے حالیہ احتجاجی کلینڈر میں 26جنوری کو کشمیریوں کے لیے یومِ سیاہ قرار دیتے ہوئے اس دن مکمل سیول کرفیو کرنے کی کال دے دی ہے۔ دریں اثنا جنگجو تنظیم حزب المجاہدین نے ایک تازہ ویڈیو میں کشمیری عوام کو یوم جمہوریہ کی تقریبات سے دور رہنے کے لئے کہا ہے۔

ویڈیو شیئرنگ ویب سائٹ یوٹیوب پر دستیاب اس دس منٹ طویل ویڈیو میں ایچ ایم کمانڈر نے کشمیری عوام سے مخاطب ہوکر کہا ہے ’ہم 26 جنوری کے حوالے سے پوری قوم سے اپیل کرتے ہیں کہ اسے یوم سیاہ کے طور پر منایا جائے اور کسی بھی سرکاری پروگرام ، فوج یا پولیس کے ذریعہ منعقدہ پروگرام کا حصہ نہ بنیں۔ جو کوئی ان پروگرامات میں شرکت کرے گا، اُس کو غدار تصور کیا جائے گا اور اسے عبرت ناک سزا دی جائے گی‘۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز