متنازعہ بیان دے کر پھنسے بی جے پی رکن پارلیمنٹ ساکشی مہاراج، مقدمہ درج

Jan 07, 2017 01:46 PM IST | Updated on: Jan 07, 2017 08:32 PM IST

میرٹھ ۔  بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے تیز طرار لیڈر اور ممبر پارلیمنٹ ساکشی مہاراج کے خلاف متنازعہ بیان دینے کے الزام میں آج مقدمہ درج ہو گیا۔ آئی جی اجے آنند نے ’یو این آئی‘ کو بتایا کہ ساکشی مہاراج کے ساتھ ہی ان کے ایک شاگرد مهیندرداس کے خلاف فوجداری کی دفعہ 295 اے، 188، 505 (3) اور 171 ایف آر پی ایکٹ کے تحت صدر بازار تھانے میں مقدمہ درج ہوا ہے۔ ان پر انتخابی ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کا الزام لگا ہے۔ الیکشن کمیشن نے ساکشی مہاراج کے بیان پر ضلع انتظامیہ سے رپورٹ طلب کی تھی۔ ساکشی مہاراج نے کل یہاں ایک مذہبی پروگرام میں کہا تھا کہ ملک میں بڑھتی ہوئی آبادی کے لئے ہندو کے بجائے وہ ذمہ دار ہیں جو چار بيویاں رکھنے اور 40 بچے پیدا کرنے کی بات کرتے ہیں۔

سنتسماگم پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے بی جے پی ممبر پارلیمنٹ نے کہا تھا، ’آبادی بڑھانے کے لئے ہندو ذمہ دار نہیں ہیں۔آبادی پر تبھی کنٹرول کیا جا سکتا ہے جب اس پر کوئی سخت قانون بنے گا۔‘ واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے حال ہی میں اپنے ایک حکم میں کہا تھا کہ کسی قسم کی نسل پرستانہ اور مذہبی بیان بازی نہیں کی جائے۔ بی جے پی رہنما کا اس قسم کا بیان سپریم کورٹ کے حکم کی خلاف ورزی تصور کی جا رہی ہے۔ اتر پردیش میں اگلے ماہ سے سات مراحل میں ہونے والے اسمبلی انتخابات کے پہلے مرحلے میں 11 فروری کو میرٹھ میں انتخابات ہونگے۔

متنازعہ بیان دے کر پھنسے بی جے پی رکن پارلیمنٹ ساکشی مہاراج، مقدمہ درج

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز