نوٹوں کی منسوخی سے عوام کا نقصان اور بینک کو فائدہ ہوا: سلمان خورشید

Nov 01, 2017 02:44 PM IST | Updated on: Nov 01, 2017 02:44 PM IST

نئی دہلی۔ نوٹوں کی منسوخی کو سمجھ سے بالاتر قرار دیتے ہوئے سابق مرکزی وزیرقانون و انصاف اور کانگریس کے سینئر لیڈر سلمان خورشید نے کہا کہ اس سے صرف عوام کا نقصان ہوا ہے اور بینکوں کو اس اقدام سے کافی فائدہ ہوا ہے۔ یہ بات انہوں نے ’نوٹوں کی منسوخی، جی ایس ٹی اور اقتصادی سست روی ‘ کے موضوع پر ایک سیمنار سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ آل انڈیا مسلم ایڈووکیٹس فورم فور جسٹس نئی دہلی اور دی سپریم کورٹ لائرس ڈسکشن فورم نئی دہلی کے زیر اہتمام منعقدہ اس پروگرام میں انہوں نے کہا کہ نوٹوں کی منسوخی کی مختلف وجوہات بتائی گئیں لیکن تمام وجوہات ناکام ثابت ہوئیں۔

انہوں نے کہا کہ نوٹوں کی منسوخی سے ابھی لوگ ابھرے نہیں تھے کہ جی ایس ٹی کے غلط طریقے سے نفاذ نے عوام، چھوٹے درمیانہ درجے کے صنعت کاروں کو تباہ کردیا اور ان کے کاروبار ٹھپ ہوگئے۔ سپریم کورٹ کے وکیل اور اٹارنی سولیسٹر سرفراز احمد صدیقی نے کہا کہ نوٹوں کی منسوخی کو ملک کے لئے تباہ کن قرار دیتے ہوئے کہاکہ حکومت کے اس قدم سے ملک اور یہاں کے عوام اور کاروباری بیسیوں سال پیچھے جا چکے ہیں اور ان کی تلافی کے لئے اب تک کوئی مناسب قدم نہیں اٹھایا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ نوٹوں کی منسوخی سے متعدد لوگ لائن میں لگ کر اپنی جان گنوا بیٹھے، نہ تو دہشت گردی ختم ہوئی اورنہ نکسلیوں کی کمر ٹوٹی بلکہ دہشت گرد زیادہ شدت سے حملہ کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ جی ایس ٹی کے نفاذ نے رہی سہی کسر پوری کردی جس کا اثر گزرے تمام تہواروں پر نمایاں طور پر نظر آیا۔

نوٹوں کی منسوخی سے عوام کا نقصان اور بینک کو فائدہ ہوا: سلمان خورشید

سلمان خورشید نے کہا کہ نوٹوں کی منسوخی سے ابھی لوگ ابھرے نہیں تھے کہ جی ایس ٹی کے غلط طریقے سے نفاذ نے عوام، چھوٹے درمیانہ درجے کے صنعت کاروں کو تباہ کردیا اور ان کے کاروبار ٹھپ ہوگئے۔

مسٹر سرفراز صدیقی نے ،جو آل انڈیا مسلم ایڈووکیٹس فورم فور جسٹس نئی دہلی کے سکریٹری جنرل بھی ہیں، کہا کہ حکومت کا ہر قدم فلاح و بہبود پر مبنی ہوتا ہے اور اس کا مقصد عوام کے مسائل کو سمجھنا اور اس کو دور کرنا ہوتا ہے لیکن نوٹوں کی منسوخی اور جی ایس ٹی کے قدم نے عوام کو مسرتوں سے دور کردیا۔ سپریم کورٹ کے سینئر وکیل ڈاکٹرپروین کمار متریجا نے دعوی کیا کہ نوٹوں کی منسوخی اور جی ایس ٹی کے نفاذ کا مقصد عوام میں پھوٹ ڈالواور حکومت کرو ہے۔ انہوں نے کہا کہ افسوسناک بات یہ ہے کہ ہم لوگ بھی حکومت کی اس چال کو سمجھ نہیں سکے اور اس کا حصہ بن گئے۔ انہوں نے کہاکہ پوری دنیا میں جی ایس ٹی کی شرح بہت کم ہے تو پھر ہندوستان میں اتنی زیادہ کیوں ہے؟

سپریم کورٹ کے سینئر ایڈووکیٹ ڈاکٹر راکیش کھنہ نے کہا کہ ہم وکیلوں نے ملک کی قیادت کی ہے ، خواہ مہاتما گاندھی ہو یا پہلے وزیر اعظم جواہر لال نہرو۔ تواس وقت ہم ملک کے حالات پر خاموش کیوں ہیں۔ سپریم کورٹ کے سینئر ایڈووکیٹ ڈاکٹر راکیش کھنہ نے کہا کہ ہم وکیلوں نے ملک کی قیادت کی ہے ، خواہ مہاتما گاندھی ہو یا پہلے وزیر اعظم جواہر لال نہرو۔ تواس وقت ہم ملک کے حالات پر خاموش کیوں ہیں۔

سپریم کورٹ کے سینئر ایڈووکیٹ ڈاکٹر راکیش کھنہ نے کہا کہ ہم وکیلوں نے ملک کی قیادت کی ہے ، خواہ مہاتما گاندھی ہو یا پہلے وزیر اعظم جواہر لال نہرو۔ تواس وقت ہم ملک کے حالات پر خاموش کیوں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستانی اقتصادیات کا قتل کیا جارہا ہے ہم حکومت کو مجبور کریں کہ وہ غلط قدم نہ اٹھائے۔ انہوں نے نوٹوں کی منسوخی کو حکومت کی ناکامی قرار دیتے ہوئے کہاکہ حکومت کے اس قدم نے ملک کی معیشت کو تباہ کردیا۔  سپریم کورٹ کے سینئر وکیل اشکوک اروڑہ نے وکیلوں سے خاموشی توڑنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ اسپتال میں آکسیجن کی کمی وجہ سے بچے مر رہے ہیں اور ہم خاموش ہیں۔ انہوں نے کہا کہ میری سب سے اپیل ہے کہ ہم اس پر غور خوض کریں، حالات کو سنبھالیں اور ملک کو بے سمتی کی طرف جانے سے روکیں۔ سپریم کورٹ کے وکیل اطہر عالم نے نظامت کے فرائض انجام دیتے ہوئے مہمانوں کا تعارف کرایا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز